آرمی چیف نے پھر لیڈ لے لی..ایاز خاں

  • raheel shareef

    جنرل راحیل شریف آرمی چیف کی تین سالہ مدت ملازمت پوری ہونے پر ریٹائر ہو جائیں گے۔ جنوری اور نومبر کے درمیان 10 ماہ کا فاصلہ ہے مگر آرمی چیف نے ایکسٹینشن نہ لینے کا اعلان کر کے کچھ کو حیران‘ کچھ کو پریشان اور حکمرانوں کو اطمینان سے مالا مال کر دیا۔ ملکی تاریخ […]

  • raheel shareef

    کرشماتی سپاہ سالار نے ریٹائر منٹ کااعلان کیوں کیا….قیوم نظامی

    پاکستان کی عسکری تاریخ کے کرشماتی سپہ سالار جنرل راحیل شریف کی ریٹائرمنٹ میں ابھی دس ماہ باقی ہیں انہوں نے اعلان کردیا ہے کہ وہ اپنے وقت پر ریٹائرہوجائینگے۔ انکی توسیع کے بارے میں قیاس آرائیاں بے بنیاد ہیں۔ وہ مدت ملازمت میں توسیع میں یقین نہیں رکھتے۔ افواج پاکستان ایک عظیم قومی ادارہ […]

  • Raheel-Sharif

    بہتر ہے کہ اعلی عدلیہ کی طرح عساکر پاکستان میں بھی سینیئر موسٹ کو سربارہ بنانے کااصول رائج کر دیا جائے..اداریہ نوائے وقت

    آرمی چیف کا مدت ِ ملازمت پوری ہونے سے دس ماہ قبل توسیع نہ لینے کا اعلان اور قومی سیاست پر اسکے ممکنہ اثرات چیف آف آرمی سٹاف جنرل راحیل شریف نے کہا ہے کہ وہ مدتِ ملازمت میں توسیع کے قائل نہیں‘ وہ مدتِ ملازمت پوری کرکے مقررہ وقت پر ریٹائر ہو جائینگے۔ اس […]

  • Raheel-Sharif

    شاباش، جنرل راحیل شریف شاباش….نواز رضا

    میری آرمی چیف جنرل راحیل شریف سے پہلی ملاقات وزیر اعظم محمد نواز شریف کے ’’ امن مشن‘‘کے دوران اس وقت طیارے میں ہوئی جب وہ ان کے ہمراہ اسلام آباد سے ریاض روانہ ہو رہے تھے اس طرح مجھے فضائی سفر اور ریاض اور تہران میں قیام کے 36 گھنٹے کے دوران انہیں بڑے […]

  • Raheel-Sharif

    خوب! بہت خوب!! …اظہار الحق

    سازش اقتدار کی نہیں ہے! یہ دونوں بھائی بہن ہمیشہ مل جل کر رہتے ہیں۔ بھائی خطرے میں ہو تو بہن اس کی مدد کرتی ہے۔ بھائی کا جب بھی بس چلے، بہن کو چُپڑی دیتا ہے اور دو دو! اقتدار حاصل کرنے کے لیے سازش کو بروئے کار لانا ہوتا ہے۔ پھر اقتدار اپنے […]

  • Raheel-Sharif

    جمہوریت کیلئے بہتر‘ استحکام کیلئے خطرناک ..نذیر ناجی

    پاکستانی چیف آف آرمی سٹاف جنرل راحیل شریف نے قبل ازوقت ریٹائرمنٹ کا اعلان کر کے تمام کرپٹ بیوروکریٹس‘ سیاستدانوں ‘ منی لانڈرنگ کرنے والوں ‘عوام کے سرمائے پر دولت مند بننے والوں اور دہشت گردوں میں اطمینان اور خوشی کی لہر دوڑا دی ہے۔ میں نے اس کالم کی سرخی‘ واشنگٹن پوسٹ کی طویل […]

prev slide next slide

سرخ گلابوں کی خوشبو

Shah Fahad  16-9
  • نام شاہ فہد
  • کلاس 9
  • عمر سال 16

سانحہ پشاور اے پی ا یس کے شہدا کی پہلی برسی

میرے بچے تم سکول سے لوٹ کر کیوں نہیں آئے
تمہیں خبر ہے نا کہ ذرا سی دیر ہو جائے
تو ماں کس قدر بے چین ہوتی ہے
تو پھر تم نے اتنی دیر کیوں لگا دی!
میرے لعل! میں نے تو تمہیں اجلا یونیفارم پہنا کر
مکتب بھیجا تھا…اور تم خوشی خوشی
مکتب گئے تھے…!
پھر چھٹی کی گھنٹی کیوں نہیں بجی
تم گھر لوٹ کر کیوں نہیں آئے
یہ کون ہے جو لکڑی کے تابوت میں بند ہے؟
سرد آنکھیں اور زرد چہرہ!
موت کی بانہوں میں زندگی سے عاری
تم تو نہیں ہو…!
اور یہ میرے اندر باہر
جانے کیوں کہرام مچا ہے!
لکڑی کے تابوت میں بند‘ تم تو نہیں ہو!
آ جائو نا…
دیکھو تم اسکول سے واپس آ جائو نا

سرخ گلابوں کی خوشبو

Shafique ur rehman 18-2nd  year
  • نام شفیق الرحمن
  • کلاس 2nd Year
  • عمر سال 18

سانحہ پشاور اے پی ا یس کے شہدا کی پہلی برسی

میرے بچے تم سکول سے لوٹ کر کیوں نہیں آئے
تمہیں خبر ہے نا کہ ذرا سی دیر ہو جائے
تو ماں کس قدر بے چین ہوتی ہے
تو پھر تم نے اتنی دیر کیوں لگا دی!
میرے لعل! میں نے تو تمہیں اجلا یونیفارم پہنا کر
مکتب بھیجا تھا…اور تم خوشی خوشی
مکتب گئے تھے…!
پھر چھٹی کی گھنٹی کیوں نہیں بجی
تم گھر لوٹ کر کیوں نہیں آئے
یہ کون ہے جو لکڑی کے تابوت میں بند ہے؟
سرد آنکھیں اور زرد چہرہ!
موت کی بانہوں میں زندگی سے عاری
تم تو نہیں ہو…!
اور یہ میرے اندر باہر
جانے کیوں کہرام مچا ہے!
لکڑی کے تابوت میں بند‘ تم تو نہیں ہو!
آ جائو نا…
دیکھو تم اسکول سے واپس آ جائو نا

سرخ گلابوں کی خوشبو

sayyed mujahid hussain shah 14-8
  • نام سید مجاہد حسین شاہ
  • کلاس 8
  • عمر سال 14

اے پی ایس پشاور کے سانحہ کے شہدا کی پہلی برسی

جہاں تم چومتی تھیں ماں وہاں تک آگیا تھا وہ

بڑا دشمن بنا پھرتا ہے جو بچوں سے لڑتا ہے
بتا کیا پوچھتا ہے وہ کتابوں میں ملوں گامَیں
کئے ماں سے ہیں جو مَیں نے کہ وعدوں میں ملوں گا مَیں
مَیں آنے والا کل ہوں وہ مجھے کیوں آج مارے گا
یہ اس کا وہم ہوگا کہ وہ اَیسے خواب مارے گا
تمہارا خون ہوں نا اس لئے اچھا لڑا ہوں مَیں
بتا آیا ہوں دشمن کو کہ اس سے تو بڑا ہوں مَیں
تو جب آتے ہوئے مجھ کو گلےتم نےلگایا تھا
امان اللہ کہا مجھ کو مِرا بیٹا بلایا تھا
خدا کے امن کی رہ میں کہاں سے آگیا تھا وہ
جہاں تم چومتی تھیں ماں وہاں تک آگیا تھا وہ
مجھے جانا پڑا ہے پر مرا بھائی کرے گا اب
مَیں جتنا نہ پڑھا وہ سب مِرا بھائی پڑھے گا اب
ابھی بابا بھی باقی ہیں کہاں تک جا سکو گے تم
ابھی وعدہ رہا تم سے یہاں نہ آسکو گے تم

سرخ گلابوں کی خوشبو

Saqib Ghani 19-2nd year
  • نام ثاقب غنی
  • کلاس 2nd Year
  • عمر سال 19

اے پی ایس پشاور کے سانحہ کے شہدا کی پہلی برسی

جہاں تم چومتی تھیں ماں وہاں تک آگیا تھا وہ

بڑا دشمن بنا پھرتا ہے جو بچوں سے لڑتا ہے
بتا کیا پوچھتا ہے وہ کتابوں میں ملوں گامَیں
کئے ماں سے ہیں جو مَیں نے کہ وعدوں میں ملوں گا مَیں
مَیں آنے والا کل ہوں وہ مجھے کیوں آج مارے گا
یہ اس کا وہم ہوگا کہ وہ اَیسے خواب مارے گا
تمہارا خون ہوں نا اس لئے اچھا لڑا ہوں مَیں
بتا آیا ہوں دشمن کو کہ اس سے تو بڑا ہوں مَیں
تو جب آتے ہوئے مجھ کو گلےتم نےلگایا تھا
امان اللہ کہا مجھ کو مِرا بیٹا بلایا تھا
خدا کے امن کی رہ میں کہاں سے آگیا تھا وہ
جہاں تم چومتی تھیں ماں وہاں تک آگیا تھا وہ
مجھے جانا پڑا ہے پر مرا بھائی کرے گا اب
مَیں جتنا نہ پڑھا وہ سب مِرا بھائی پڑھے گا اب
ابھی بابا بھی باقی ہیں کہاں تک جا سکو گے تم
ابھی وعدہ رہا تم سے یہاں نہ آسکو گے تم

سرخ گلابوں کی خوشبو

Sajjad Ali (superintendent
  • نام ساجد علی
  • کلاس Superntandant

خدا کرے کہ میری ارض پاک پر اترے
وہ فصل گل ، جسے اندیشہ زوال نہ ہو
یہاں جو پھول کھلے، وہ کھلا رہے صدیوں
یہاں خزاں کو گزرنے کی بھی مجال نہ ہو
یہاں جو سبزہ اگے، وہ ہمیشہ سبز رہے
اور ایسا سبز ، کہ جس کی کوٴی مثال نہ ہو
گھنی گھٹاٴیں یہاں ایسی بارشیں برسا ٴیں
کہ پتھروں سے بھی روٴید گی محال نہ ہو
خدا کرے کہ نہ خم ہو سر وقار وطن
اور اس کے حسن کو تشویش ماہ و سال نہ ہو
ہرایک فرد ہو تہذیب و فن کا اوج کمال
کوٴی ملول نہ ہو، کوٴی خستہ حال نہ ہو
خدا کرے کہ میرے اک بھی ہم وطن کےلیے
حیات جرم نہ ہو، زندگی وبال نہ ہو
خدا کرے کہ میری ارض پاک پر اترے
وہ فصل گل ، جسے اندیشہ زوال نہ ہو
شاعر: احمد ندیم قاسمی

سرخ گلابوں کی خوشبو

Saima Zareen 39-teacher
  • نام صائمہ زریں
  • کلاس Teacher
  • عمر سال 39

خدا کرے کہ میری ارض پاک پر اترے
وہ فصل گل ، جسے اندیشہ زوال نہ ہو
یہاں جو پھول کھلے، وہ کھلا رہے صدیوں
یہاں خزاں کو گزرنے کی بھی مجال نہ ہو
یہاں جو سبزہ اگے، وہ ہمیشہ سبز رہے
اور ایسا سبز ، کہ جس کی کوٴی مثال نہ ہو
گھنی گھٹاٴیں یہاں ایسی بارشیں برسا ٴیں
کہ پتھروں سے بھی روٴید گی محال نہ ہو
خدا کرے کہ نہ خم ہو سر وقار وطن
اور اس کے حسن کو تشویش ماہ و سال نہ ہو
ہرایک فرد ہو تہذیب و فن کا اوج کمال
کوٴی ملول نہ ہو، کوٴی خستہ حال نہ ہو
خدا کرے کہ میرے اک بھی ہم وطن کےلیے
حیات جرم نہ ہو، زندگی وبال نہ ہو
خدا کرے کہ میری ارض پاک پر اترے
وہ فصل گل ، جسے اندیشہ زوال نہ ہو
شاعر: احمد ندیم قاسمی

سرخ گلابوں کی خوشبو

saiffullah durranii 14-8
  • نام سیف اللہ درانی
  • کلاس 8
  • عمر سال 14

اے پی ایس پشاور کے سانحہ کے شہدا کی پہلی برسی

جہاں تم چومتی تھیں ماں وہاں تک آگیا تھا وہ

بڑا دشمن بنا پھرتا ہے جو بچوں سے لڑتا ہے
بتا کیا پوچھتا ہے وہ کتابوں میں ملوں گامَیں
کئے ماں سے ہیں جو مَیں نے کہ وعدوں میں ملوں گا مَیں
مَیں آنے والا کل ہوں وہ مجھے کیوں آج مارے گا
یہ اس کا وہم ہوگا کہ وہ اَیسے خواب مارے گا
تمہارا خون ہوں نا اس لئے اچھا لڑا ہوں مَیں
بتا آیا ہوں دشمن کو کہ اس سے تو بڑا ہوں مَیں
تو جب آتے ہوئے مجھ کو گلےتم نےلگایا تھا
امان اللہ کہا مجھ کو مِرا بیٹا بلایا تھا
خدا کے امن کی رہ میں کہاں سے آگیا تھا وہ
جہاں تم چومتی تھیں ماں وہاں تک آگیا تھا وہ
مجھے جانا پڑا ہے پر مرا بھائی کرے گا اب
مَیں جتنا نہ پڑھا وہ سب مِرا بھائی پڑھے گا اب
ابھی بابا بھی باقی ہیں کہاں تک جا سکو گے تم
ابھی وعدہ رہا تم سے یہاں نہ آسکو گے تم

سرخ گلابوں کی خوشبو

Sahar Afshan 33- teacher
  • نام سحر افشاں
  • کلاس Teacher
  • عمر سال 33

خدا کرے کہ میری ارض پاک پر اترے
وہ فصل گل ، جسے اندیشہ زوال نہ ہو
یہاں جو پھول کھلے، وہ کھلا رہے صدیوں
یہاں خزاں کو گزرنے کی بھی مجال نہ ہو
یہاں جو سبزہ اگے، وہ ہمیشہ سبز رہے
اور ایسا سبز ، کہ جس کی کوٴی مثال نہ ہو
گھنی گھٹاٴیں یہاں ایسی بارشیں برسا ٴیں
کہ پتھروں سے بھی روٴید گی محال نہ ہو
خدا کرے کہ نہ خم ہو سر وقار وطن
اور اس کے حسن کو تشویش ماہ و سال نہ ہو
ہرایک فرد ہو تہذیب و فن کا اوج کمال
کوٴی ملول نہ ہو، کوٴی خستہ حال نہ ہو
خدا کرے کہ میرے اک بھی ہم وطن کےلیے
حیات جرم نہ ہو، زندگی وبال نہ ہو
خدا کرے کہ میری ارض پاک پر اترے
وہ فصل گل ، جسے اندیشہ زوال نہ ہو
شاعر: احمد ندیم قاسمی

سرخ گلابوں کی خوشبو

Sadia Gul Khattak 24 -teacher
  • نام سعدیہ گل خٹک
  • کلاس Teacher
  • عمر سال 24

خدا کرے کہ میری ارض پاک پر اترے
وہ فصل گل ، جسے اندیشہ زوال نہ ہو
یہاں جو پھول کھلے، وہ کھلا رہے صدیوں
یہاں خزاں کو گزرنے کی بھی مجال نہ ہو

یہاں جو سبزہ اگے، وہ ہمیشہ سبز رہے
اور ایسا سبز ، کہ جس کی کوٴی مثال نہ ہو
گھنی گھٹاٴیں یہاں ایسی بارشیں برسا ٴیں
کہ پتھروں سے بھی روٴید گی محال نہ ہو

خدا کرے کہ نہ خم ہو سر وقار وطن
اور اس کے حسن کو تشویش ماہ و سال نہ ہو
ہرایک فرد ہو تہذیب و فن کا اوج کمال
کوٴی ملول نہ ہو، کوٴی خستہ حال نہ ہو

خدا کرے کہ میرے اک بھی ہم وطن کےلیے
حیات جرم نہ ہو، زندگی وبال نہ ہو
خدا کرے کہ میری ارض پاک پر اترے
وہ فصل گل ، جسے اندیشہ زوال نہ ہو

شاعر: احمد ندیم قاسمی

سرخ گلابوں کی خوشبو

Saad ur Rehman 15-9
  • نام سعد الرحمن
  • کلاس 9
  • عمر سال 15

مرے لعل کی یاد

آ تجھے دامن بھر لوں
تیرے ماتھے پہ مہکتا ہوا بوسہ دے لوں
تیری تصویر سے اٹھتی ہوئی شہادت کی مہک
وہ ابدتاب مہک جس نے تری دھرتی کو
خرد افروز اجالوں کی سحر بخشی ہے
آنگن آنگن تری یادوں کے علم اٹھتے ہیں
ایک میں کیا،کہ ترے دیس کی ساری مائیں
ایک جاں ہو کے تری یاد کا دم بھرتی ہیں
یاد کا دن ہے، ترے علم شہادت کی قسم
تجھ سے کہنا ہے تو بس یہ کہ بھلائیں گے نہیں
تیری قربانی، تری فکر، ترے عزم کی لو
دل بہ دل نقش ہے
تاحشر رہے گی یونہی
جان جان! ماں تری یادوں کے بھی صدقے جائے

( علی زریون)

سرخ گلابوں کی خوشبو

Rafique Raza Bangesh
  • نام رفیق رضا بنگش

اے پی ایس پشاور کے سانحہ کے شہدا کی پہلی برسی

جہاں تم چومتی تھیں ماں وہاں تک آگیا تھا وہ

بڑا دشمن بنا پھرتا ہے جو بچوں سے لڑتا ہے
بتا کیا پوچھتا ہے وہ کتابوں میں ملوں گامَیں
کئے ماں سے ہیں جو مَیں نے کہ وعدوں میں ملوں گا مَیں
مَیں آنے والا کل ہوں وہ مجھے کیوں آج مارے گا
یہ اس کا وہم ہوگا کہ وہ اَیسے خواب مارے گا
تمہارا خون ہوں نا اس لئے اچھا لڑا ہوں مَیں
بتا آیا ہوں دشمن کو کہ اس سے تو بڑا ہوں مَیں
تو جب آتے ہوئے مجھ کو گلےتم نےلگایا تھا
امان اللہ کہا مجھ کو مِرا بیٹا بلایا تھا
خدا کے امن کی رہ میں کہاں سے آگیا تھا وہ
جہاں تم چومتی تھیں ماں وہاں تک آگیا تھا وہ
مجھے جانا پڑا ہے پر مرا بھائی کرے گا اب
مَیں جتنا نہ پڑھا وہ سب مِرا بھائی پڑھے گا اب
ابھی بابا بھی باقی ہیں کہاں تک جا سکو گے تم
ابھی وعدہ رہا تم سے یہاں نہ آسکو گے تم

سرخ گلابوں کی خوشبو

Pervaiz Akhtar 50-lab assistant
  • نام پرویز اختر
  • کلاس lab Assistant
  • عمر سال 50

خدا کرے کہ میری ارض پاک پر اترے
وہ فصل گل ، جسے اندیشہ زوال نہ ہو
یہاں جو پھول کھلے، وہ کھلا رہے صدیوں
یہاں خزاں کو گزرنے کی بھی مجال نہ ہو
یہاں جو سبزہ اگے، وہ ہمیشہ سبز رہے
اور ایسا سبز ، کہ جس کی کوٴی مثال نہ ہو
گھنی گھٹاٴیں یہاں ایسی بارشیں برسا ٴیں
کہ پتھروں سے بھی روٴید گی محال نہ ہو
خدا کرے کہ نہ خم ہو سر وقار وطن
اور اس کے حسن کو تشویش ماہ و سال نہ ہو
ہرایک فرد ہو تہذیب و فن کا اوج کمال
کوٴی ملول نہ ہو، کوٴی خستہ حال نہ ہو
خدا کرے کہ میرے اک بھی ہم وطن کےلیے
حیات جرم نہ ہو، زندگی وبال نہ ہو
خدا کرے کہ میری ارض پاک پر اترے
وہ فصل گل ، جسے اندیشہ زوال نہ ہو
شاعر: احمد ندیم قاسمی

سرخ گلابوں کی خوشبو

omer khan 14-8
  • نام عمر خاں
  • کلاس 8
  • عمر سال 14

سانحہ پشاور اے پی ا یس کے شہدا کی پہلی برسی

میرے بچے تم سکول سے لوٹ کر کیوں نہیں آئے
تمہیں خبر ہے نا کہ ذرا سی دیر ہو جائے
تو ماں کس قدر بے چین ہوتی ہے
تو پھر تم نے اتنی دیر کیوں لگا دی!
میرے لعل! میں نے تو تمہیں اجلا یونیفارم پہنا کر
مکتب بھیجا تھا…اور تم خوشی خوشی
مکتب گئے تھے…!
پھر چھٹی کی گھنٹی کیوں نہیں بجی
تم گھر لوٹ کر کیوں نہیں آئے
یہ کون ہے جو لکڑی کے تابوت میں بند ہے؟
سرد آنکھیں اور زرد چہرہ!
موت کی بانہوں میں زندگی سے عاری
تم تو نہیں ہو…!
اور یہ میرے اندر باہر
جانے کیوں کہرام مچا ہے!
لکڑی کے تابوت میں بند‘ تم تو نہیں ہو!
آ جائو نا…
دیکھو تم اسکول سے واپس آ جائو نا

سرخ گلابوں کی خوشبو

Noor ullah Durrani 15-9
  • نام نورا لہدی درانی
  • کلاس 9
  • عمر سال 15

اے پی ایس پشاور کے سانحہ کے شہدا کی پہلی برسی

جہاں تم چومتی تھیں ماں وہاں تک آگیا تھا وہ

بڑا دشمن بنا پھرتا ہے جو بچوں سے لڑتا ہے
بتا کیا پوچھتا ہے وہ کتابوں میں ملوں گامَیں
کئے ماں سے ہیں جو مَیں نے کہ وعدوں میں ملوں گا مَیں
مَیں آنے والا کل ہوں وہ مجھے کیوں آج مارے گا
یہ اس کا وہم ہوگا کہ وہ اَیسے خواب مارے گا
تمہارا خون ہوں نا اس لئے اچھا لڑا ہوں مَیں
بتا آیا ہوں دشمن کو کہ اس سے تو بڑا ہوں مَیں
تو جب آتے ہوئے مجھ کو گلےتم نےلگایا تھا
امان اللہ کہا مجھ کو مِرا بیٹا بلایا تھا
خدا کے امن کی رہ میں کہاں سے آگیا تھا وہ
جہاں تم چومتی تھیں ماں وہاں تک آگیا تھا وہ
مجھے جانا پڑا ہے پر مرا بھائی کرے گا اب
مَیں جتنا نہ پڑھا وہ سب مِرا بھائی پڑھے گا اب
ابھی بابا بھی باقی ہیں کہاں تک جا سکو گے تم
ابھی وعدہ رہا تم سے یہاں نہ آسکو گے تم

سرخ گلابوں کی خوشبو

Nawab Ali 42-teacher
  • نام نواب علی
  • کلاس Teacher
  • عمر سال 42

خدا کرے کہ میری ارض پاک پر اترے

خدا کرے کہ میری ارض پاک پر اترے
وہ فصل گل ، جسے اندیشہ زوال نہ ہو
یہاں جو پھول کھلے، وہ کھلا رہے صدیوں
یہاں خزاں کو گزرنے کی بھی مجال نہ ہو

یہاں جو سبزہ اگے، وہ ہمیشہ سبز رہے
اور ایسا سبز ، کہ جس کی کوٴی مثال نہ ہو
گھنی گھٹاٴیں یہاں ایسی بارشیں برسا ٴیں
کہ پتھروں سے بھی روٴید گی محال نہ ہو

خدا کرے کہ نہ خم ہو سر وقار وطن
اور اس کے حسن کو تشویش ماہ و سال نہ ہو
ہرایک فرد ہو تہذیب و فن کا اوج کمال
کوٴی ملول نہ ہو، کوٴی خستہ حال نہ ہو

خدا کرے کہ میرے اک بھی ہم وطن کےلیے
حیات جرم نہ ہو، زندگی وبال نہ ہو
خدا کرے کہ میری ارض پاک پر اترے
وہ فصل گل ، جسے اندیشہ زوال نہ ہو

شاعر: احمد ندیم قاسمی

سرخ گلابوں کی خوشبو

nangyal tariq 14-8
  • نام ننگیال طارق
  • کلاس 8
  • عمر سال 14

مرے لعل کی یاد

آ تجھے دامن بھر لوں
تیرے ماتھے پہ مہکتا ہوا بوسہ دے لوں
تیری تصویر سے اٹھتی ہوئی شہادت کی مہک
وہ ابدتاب مہک جس نے تری دھرتی کو
خرد افروز اجالوں کی سحر بخشی ہے
آنگن آنگن تری یادوں کے علم اٹھتے ہیں
ایک میں کیا،کہ ترے دیس کی ساری مائیں
ایک جاں ہو کے تری یاد کا دم بھرتی ہیں
یاد کا دن ہے، ترے علم شہادت کی قسم
تجھ سے کہنا ہے تو بس یہ کہ بھلائیں گے نہیں
تیری قربانی، تری فکر، ترے عزم کی لو
دل بہ دل نقش ہے
تاحشر رہے گی یونہی
جان جان! ماں تری یادوں کے بھی صدقے جائے

( علی زریون)

سرخ گلابوں کی خوشبو

Nadeem Hussain  16-10
  • نام ندیم حسین
  • کلاس 10
  • عمر سال 16

اے پی ایس پشاور کے سانحہ کے شہدا کی پہلی برسی

جہاں تم چومتی تھیں ماں وہاں تک آگیا تھا وہ

بڑا دشمن بنا پھرتا ہے جو بچوں سے لڑتا ہے
بتا کیا پوچھتا ہے وہ کتابوں میں ملوں گامَیں
کئے ماں سے ہیں جو مَیں نے کہ وعدوں میں ملوں گا مَیں
مَیں آنے والا کل ہوں وہ مجھے کیوں آج مارے گا
یہ اس کا وہم ہوگا کہ وہ اَیسے خواب مارے گا
تمہارا خون ہوں نا اس لئے اچھا لڑا ہوں مَیں
بتا آیا ہوں دشمن کو کہ اس سے تو بڑا ہوں مَیں
تو جب آتے ہوئے مجھ کو گلےتم نےلگایا تھا
امان اللہ کہا مجھ کو مِرا بیٹا بلایا تھا
خدا کے امن کی رہ میں کہاں سے آگیا تھا وہ
جہاں تم چومتی تھیں ماں وہاں تک آگیا تھا وہ
مجھے جانا پڑا ہے پر مرا بھائی کرے گا اب
مَیں جتنا نہ پڑھا وہ سب مِرا بھائی پڑھے گا اب
ابھی بابا بھی باقی ہیں کہاں تک جا سکو گے تم
ابھی وعدہ رہا تم سے یہاں نہ آسکو گے تم

سرخ گلابوں کی خوشبو

Muzamil Umer Sadiq 16-9
  • نام محمد عمر صادق
  • کلاس 9
  • عمر سال 16

سانحہ پشاور اے پی ا یس کے شہدا کی پہلی برسی

میرے بچے تم سکول سے لوٹ کر کیوں نہیں آئے
تمہیں خبر ہے نا کہ ذرا سی دیر ہو جائے
تو ماں کس قدر بے چین ہوتی ہے
تو پھر تم نے اتنی دیر کیوں لگا دی!
میرے لعل! میں نے تو تمہیں اجلا یونیفارم پہنا کر
مکتب بھیجا تھا…اور تم خوشی خوشی
مکتب گئے تھے…!
پھر چھٹی کی گھنٹی کیوں نہیں بجی
تم گھر لوٹ کر کیوں نہیں آئے
یہ کون ہے جو لکڑی کے تابوت میں بند ہے؟
سرد آنکھیں اور زرد چہرہ!
موت کی بانہوں میں زندگی سے عاری
تم تو نہیں ہو…!
اور یہ میرے اندر باہر
جانے کیوں کہرام مچا ہے!
لکڑی کے تابوت میں بند‘ تم تو نہیں ہو!
آ جائو نا…
دیکھو تم اسکول سے واپس آ جائو نا

سرخ گلابوں کی خوشبو

Muhammad Yaseen 15-10
  • نام محمد یا سین
  • کلاس 10
  • عمر سال 15

مرے لعل کی یاد

آ تجھے دامن بھر لوں
تیرے ماتھے پہ مہکتا ہوا بوسہ دے لوں
تیری تصویر سے اٹھتی ہوئی شہادت کی مہک
وہ ابدتاب مہک جس نے تری دھرتی کو
خرد افروز اجالوں کی سحر بخشی ہے
آنگن آنگن تری یادوں کے علم اٹھتے ہیں
ایک میں کیا،کہ ترے دیس کی ساری مائیں
ایک جاں ہو کے تری یاد کا دم بھرتی ہیں
یاد کا دن ہے، ترے علم شہادت کی قسم
تجھ سے کہنا ہے تو بس یہ کہ بھلائیں گے نہیں
تیری قربانی، تری فکر، ترے عزم کی لو
دل بہ دل نقش ہے
تاحشر رہے گی یونہی
جان جان! ماں تری یادوں کے بھی صدقے جائے

( علی زریون)

سرخ گلابوں کی خوشبو

Muhammad Waqar 15-9
  • نام محمد وقار
  • کلاس 9
  • عمر سال 15

اے پی ایس پشاور کے سانحہ کے شہدا کی پہلی برسی

جہاں تم چومتی تھیں ماں وہاں تک آگیا تھا وہ

بڑا دشمن بنا پھرتا ہے جو بچوں سے لڑتا ہے
بتا کیا پوچھتا ہے وہ کتابوں میں ملوں گامَیں
کئے ماں سے ہیں جو مَیں نے کہ وعدوں میں ملوں گا مَیں
مَیں آنے والا کل ہوں وہ مجھے کیوں آج مارے گا
یہ اس کا وہم ہوگا کہ وہ اَیسے خواب مارے گا
تمہارا خون ہوں نا اس لئے اچھا لڑا ہوں مَیں
بتا آیا ہوں دشمن کو کہ اس سے تو بڑا ہوں مَیں
تو جب آتے ہوئے مجھ کو گلےتم نےلگایا تھا
امان اللہ کہا مجھ کو مِرا بیٹا بلایا تھا
خدا کے امن کی رہ میں کہاں سے آگیا تھا وہ
جہاں تم چومتی تھیں ماں وہاں تک آگیا تھا وہ
مجھے جانا پڑا ہے پر مرا بھائی کرے گا اب
مَیں جتنا نہ پڑھا وہ سب مِرا بھائی پڑھے گا اب
ابھی بابا بھی باقی ہیں کہاں تک جا سکو گے تم
ابھی وعدہ رہا تم سے یہاں نہ آسکو گے تم

سرخ گلابوں کی خوشبو

Muhammad Tahir 15-10
  • نام محمد طاہر
  • کلاس 10
  • عمر سال 15

اے پی ایس پشاور کے سانحہ کے شہدا کی پہلی برسی

جہاں تم چومتی تھیں ماں وہاں تک آگیا تھا وہ

بڑا دشمن بنا پھرتا ہے جو بچوں سے لڑتا ہے
بتا کیا پوچھتا ہے وہ کتابوں میں ملوں گامَیں
کئے ماں سے ہیں جو مَیں نے کہ وعدوں میں ملوں گا مَیں
مَیں آنے والا کل ہوں وہ مجھے کیوں آج مارے گا
یہ اس کا وہم ہوگا کہ وہ اَیسے خواب مارے گا
تمہارا خون ہوں نا اس لئے اچھا لڑا ہوں مَیں
بتا آیا ہوں دشمن کو کہ اس سے تو بڑا ہوں مَیں
تو جب آتے ہوئے مجھ کو گلےتم نےلگایا تھا
امان اللہ کہا مجھ کو مِرا بیٹا بلایا تھا
خدا کے امن کی رہ میں کہاں سے آگیا تھا وہ
جہاں تم چومتی تھیں ماں وہاں تک آگیا تھا وہ
مجھے جانا پڑا ہے پر مرا بھائی کرے گا اب
مَیں جتنا نہ پڑھا وہ سب مِرا بھائی پڑھے گا اب
ابھی بابا بھی باقی ہیں کہاں تک جا سکو گے تم
ابھی وعدہ رہا تم سے یہاں نہ آسکو گے تم

سرخ گلابوں کی خوشبو

Muhammad Shafqat 15-9
  • نام محمد شفقت
  • کلاس 9
  • عمر سال 15

سانحہ پشاور اے پی ا یس پشاور کے شہدا کی پہلی برسی

میرے بچے تم سکول سے لوٹ کر کیوں نہیں آئے
تمہیں خبر ہے نا کہ ذرا سی دیر ہو جائے
تو ماں کس قدر بے چین ہوتی ہے
تو پھر تم نے اتنی دیر کیوں لگا دی!
میرے لعل! میں نے تو تمہیں اجلا یونیفارم پہنا کر
مکتب بھیجا تھا…اور تم خوشی خوشی
مکتب گئے تھے…!
پھر چھٹی کی گھنٹی کیوں نہیں بجی
تم گھر لوٹ کر کیوں نہیں آئے
یہ کون ہے جو لکڑی کے تابوت میں بند ہے؟
سرد آنکھیں اور زرد چہرہ!
موت کی بانہوں میں زندگی سے عاری
تم تو نہیں ہو…!
آج مگر یہ سناٹا سا
گھر کے سارے کمروں میں کیوں پھیل گیا!
اور یہ میرے اندر باہر
جانے کیوں کہرام مچا ہے!
لکڑی کے تابوت میں بند‘ تم تو نہیں ہو!
آ جائو نا…
دیکھو تم اسکول سے واپس آ جائو نا

سرخ گلابوں کی خوشبو

Muhammad Shafiq 41-clerk
  • نام محمد شفیق
  • کلاس Clerk
  • عمر سال 41

سانحہ اے پی ایس پشاور کے شہدا کی پہلی برسی

مرکز علم پر نسلِ بو جہل کا
کیسا سفاک اور خونی حملہ ہوا
آسماں دیکھتا رہ گیا ماجرا
چار جانب تھی بس گولیوں کی صدا
قتل کرتی ہے معصومیت بے گناہ
کربلا تا پشاور یزیدی سپاہ
بو لہو کی فضا میں بسی چار سو
جیت پر اپنی خوش ہو رہا ہے عدو
خوں میں بچوں نے اپنے کیا خود وضو
پیشِ ارضِ وطن مائیں ہیں سرخرو
بربریت ہوئی وہ خدا کی پناہ
کربلا تا پشاور یزیدی سپاہ

شاعر: سید صفدر ہمدانی

سرخ گلابوں کی خوشبو

muhammad salman 14-8
  • نام محمد سلمان
  • کلاس 8
  • عمر سال 14

سانحہ اے پی ایس پشاور کے شہدا کی پہلی برسی

مرے لعل کی یاد

آ تجھے دامن بھر لوں
تیرے ماتھے پہ مہکتا ہوا بوسہ دے لوں
تیری تصویر سے اٹھتی ہوئی شہادت کی مہک
وہ ابدتاب مہک جس نے تری دھرتی کو
خرد افروز اجالوں کی سحر بخشی ہے
آنگن آنگن تری یادوں کے علم اٹھتے ہیں
ایک میں کیا،کہ ترے دیس کی ساری مائیں
ایک جاں ہو کے تری یاد کا دم بھرتی ہیں
یاد کا دن ہے، ترے علم شہادت کی قسم
تجھ سے کہنا ہے تو بس یہ کہ بھلائیں گے نہیں
تیری قربانی، تری فکر، ترے عزم کی لو
دل بہ دل نقش ہے
تاحشر رہے گی یونہی
جان جان! ماں تری یادوں کے بھی صدقے جائے

( علی زریون)

سرخ گلابوں کی خوشبو

Muhammad Sahiban Durrani 17-10
  • نام محمد صاحبان درانی
  • کلاس 10
  • عمر سال 17

اے پی ایس پشاور کے سانحہ کے شہدا کی پہلی برسی

جہاں تم چومتی تھیں ماں وہاں تک آگیا تھا وہ

بڑا دشمن بنا پھرتا ہے جو بچوں سے لڑتا ہے
بتا کیا پوچھتا ہے وہ کتابوں میں ملوں گامَیں
کئے ماں سے ہیں جو مَیں نے کہ وعدوں میں ملوں گا مَیں
مَیں آنے والا کل ہوں وہ مجھے کیوں آج مارے گا
یہ اس کا وہم ہوگا کہ وہ اَیسے خواب مارے گا
تمہارا خون ہوں نا اس لئے اچھا لڑا ہوں مَیں
بتا آیا ہوں دشمن کو کہ اس سے تو بڑا ہوں مَیں
تو جب آتے ہوئے مجھ کو گلےتم نےلگایا تھا
امان اللہ کہا مجھ کو مِرا بیٹا بلایا تھا
خدا کے امن کی رہ میں کہاں سے آگیا تھا وہ
جہاں تم چومتی تھیں ماں وہاں تک آگیا تھا وہ
مجھے جانا پڑا ہے پر مرا بھائی کرے گا اب
مَیں جتنا نہ پڑھا وہ سب مِرا بھائی پڑھے گا اب
ابھی بابا بھی باقی ہیں کہاں تک جا سکو گے تم
ابھی وعدہ رہا تم سے یہاں نہ آسکو گے تم

سرخ گلابوں کی خوشبو

Muhammad Saeed 53-teacher
  • نام محمد سعید
  • کلاس Teacher
  • عمر سال 53

اے پی ایس پشاور کے سانحہ کے شہدا کی پہلی برسی

جہاں تم چومتی تھیں ماں وہاں تک آگیا تھا وہ

بڑا دشمن بنا پھرتا ہے جو بچوں سے لڑتا ہے
بتا کیا پوچھتا ہے وہ کتابوں میں ملوں گامَیں
کئے ماں سے ہیں جو مَیں نے کہ وعدوں میں ملوں گا مَیں
مَیں آنے والا کل ہوں وہ مجھے کیوں آج مارے گا
یہ اس کا وہم ہوگا کہ وہ اَیسے خواب مارے گا
تمہارا خون ہوں نا اس لئے اچھا لڑا ہوں مَیں
بتا آیا ہوں دشمن کو کہ اس سے تو بڑا ہوں مَیں
تو جب آتے ہوئے مجھ کو گلےتم نےلگایا تھا
امان اللہ کہا مجھ کو مِرا بیٹا بلایا تھا
خدا کے امن کی رہ میں کہاں سے آگیا تھا وہ
جہاں تم چومتی تھیں ماں وہاں تک آگیا تھا وہ
مجھے جانا پڑا ہے پر مرا بھائی کرے گا اب
مَیں جتنا نہ پڑھا وہ سب مِرا بھائی پڑھے گا اب
ابھی بابا بھی باقی ہیں کہاں تک جا سکو گے تم
ابھی وعدہ رہا تم سے یہاں نہ آسکو گے تم

سرخ گلابوں کی خوشبو

Muhammad Imran 18-2nd  year
  • نام محمد عمران
  • کلاس 2nd Year
  • عمر سال 18

سانحہ پشاور اے پی ا یس کے شہدا کی پہلی برسی

میرے بچے تم سکول سے لوٹ کر کیوں نہیں آئے
تمہیں خبر ہے نا کہ ذرا سی دیر ہو جائے
تو ماں کس قدر بے چین ہوتی ہے
تو پھر تم نے اتنی دیر کیوں لگا دی!
میرے لعل! میں نے تو تمہیں اجلا یونیفارم پہنا کر
مکتب بھیجا تھا…اور تم خوشی خوشی
مکتب گئے تھے…!
پھر چھٹی کی گھنٹی کیوں نہیں بجی
تم گھر لوٹ کر کیوں نہیں آئے
یہ کون ہے جو لکڑی کے تابوت میں بند ہے؟
سرد آنکھیں اور زرد چہرہ!
موت کی بانہوں میں زندگی سے عاری
تم تو نہیں ہو…!
اور یہ میرے اندر باہر
جانے کیوں کہرام مچا ہے!
لکڑی کے تابوت میں بند‘ تم تو نہیں ہو!
آ جائو نا…
دیکھو تم اسکول سے واپس آ جائو نا

سرخ گلابوں کی خوشبو

Muhammad hussain 24- gardener-24
  • نام محمد حسین
  • کلاس Gardener
  • عمر سال 24

اے پی ایس پشاور کے سانحہ کے شہدا کی پہلی برسی

جہاں تم چومتی تھیں ماں وہاں تک آگیا تھا وہ

بڑا دشمن بنا پھرتا ہے جو بچوں سے لڑتا ہے
بتا کیا پوچھتا ہے وہ کتابوں میں ملوں گامَیں
کئے ماں سے ہیں جو مَیں نے کہ وعدوں میں ملوں گا مَیں
مَیں آنے والا کل ہوں وہ مجھے کیوں آج مارے گا
یہ اس کا وہم ہوگا کہ وہ اَیسے خواب مارے گا
تمہارا خون ہوں نا اس لئے اچھا لڑا ہوں مَیں
بتا آیا ہوں دشمن کو کہ اس سے تو بڑا ہوں مَیں
تو جب آتے ہوئے مجھ کو گلےتم نےلگایا تھا
امان اللہ کہا مجھ کو مِرا بیٹا بلایا تھا
خدا کے امن کی رہ میں کہاں سے آگیا تھا وہ
جہاں تم چومتی تھیں ماں وہاں تک آگیا تھا وہ
مجھے جانا پڑا ہے پر مرا بھائی کرے گا اب
مَیں جتنا نہ پڑھا وہ سب مِرا بھائی پڑھے گا اب
ابھی بابا بھی باقی ہیں کہاں تک جا سکو گے تم
ابھی وعدہ رہا تم سے یہاں نہ آسکو گے تم

سرخ گلابوں کی خوشبو

muhammad harris khan 14-8
  • نام محمد حارث خاں
  • کلاس 8
  • عمر سال 14

سانحہ پشاور اے پی ا یس کے شہدا کی پہلی برسی

میرے بچے تم سکول سے لوٹ کر کیوں نہیں آئے
تمہیں خبر ہے نا کہ ذرا سی دیر ہو جائے
تو ماں کس قدر بے چین ہوتی ہے
تو پھر تم نے اتنی دیر کیوں لگا دی!
میرے لعل! میں نے تو تمہیں اجلا یونیفارم پہنا کر
مکتب بھیجا تھا…اور تم خوشی خوشی
مکتب گئے تھے…!
پھر چھٹی کی گھنٹی کیوں نہیں بجی
تم گھر لوٹ کر کیوں نہیں آئے
یہ کون ہے جو لکڑی کے تابوت میں بند ہے؟
سرد آنکھیں اور زرد چہرہ!
موت کی بانہوں میں زندگی سے عاری
تم تو نہیں ہو…!
اور یہ میرے اندر باہر
جانے کیوں کہرام مچا ہے!
لکڑی کے تابوت میں بند‘ تم تو نہیں ہو!
آ جائو نا…
دیکھو تم اسکول سے واپس آ جائو نا

سرخ گلابوں کی خوشبو

Muhammad daud 19-2nd year
  • نام محمد داود
  • کلاس 2nd Year
  • عمر سال 19

سانحہ پشاور اے پی ا یس کے شہدا کی پہلی برسی

میرے بچے تم سکول سے لوٹ کر کیوں نہیں آئے
تمہیں خبر ہے نا کہ ذرا سی دیر ہو جائے
تو ماں کس قدر بے چین ہوتی ہے
تو پھر تم نے اتنی دیر کیوں لگا دی!
میرے لعل! میں نے تو تمہیں اجلا یونیفارم پہنا کر
مکتب بھیجا تھا…اور تم خوشی خوشی
مکتب گئے تھے…!
پھر چھٹی کی گھنٹی کیوں نہیں بجی
تم گھر لوٹ کر کیوں نہیں آئے
یہ کون ہے جو لکڑی کے تابوت میں بند ہے؟
سرد آنکھیں اور زرد چہرہ!
موت کی بانہوں میں زندگی سے عاری
تم تو نہیں ہو…!
اور یہ میرے اندر باہر
جانے کیوں کہرام مچا ہے!
لکڑی کے تابوت میں بند‘ تم تو نہیں ہو!
آ جائو نا…
دیکھو تم اسکول سے واپس آ جائو نا

سرخ گلابوں کی خوشبو

Muhammad Bilal 32 -guard
  • نام محمد بلال
  • کلاس Gaurd
  • عمر سال 32

اے پی ایس پشاور کے سانحہ کی پہلی برسی

جہاں تم چومتی تھیں ماں وہاں تک آگیا تھا وہ

بڑا دشمن بنا پھرتا ہے جو بچوں سے لڑتا ہے
بتا کیا پوچھتا ہے وہ کتابوں میں ملوں گامَیں
کئے ماں سے ہیں جو مَیں نے کہ وعدوں میں ملوں گا مَیں
مَیں آنے والا کل ہوں وہ مجھے کیوں آج مارے گا
یہ اس کا وہم ہوگا کہ وہ اَیسے خواب مارے گا
تمہارا خون ہوں نا اس لئے اچھا لڑا ہوں مَیں
بتا آیا ہوں دشمن کو کہ اس سے تو بڑا ہوں مَیں
تو جب آتے ہوئے مجھ کو گلےتم نےلگایا تھا
امان اللہ کہا مجھ کو مِرا بیٹا بلایا تھا
خدا کے امن کی رہ میں کہاں سے آگیا تھا وہ
جہاں تم چومتی تھیں ماں وہاں تک آگیا تھا وہ
مجھے جانا پڑا ہے پر مرا بھائی کرے گا اب
مَیں جتنا نہ پڑھا وہ سب مِرا بھائی پڑھے گا اب
ابھی بابا بھی باقی ہیں کہاں تک جا سکو گے تم
ابھی وعدہ رہا تم سے یہاں نہ آسکو گے تم

سرخ گلابوں کی خوشبو

Muhammad azhar zaheer 13-10
  • نام محمد اظہر ظہیر
  • کلاس 10
  • عمر سال 13

خدا کرے کہ میری ارض پاک پر اترے
وہ فصل گل ، جسے اندیشہ زوال نہ ہو
یہاں جو پھول کھلے، وہ کھلا رہے صدیوں
یہاں خزاں کو گزرنے کی بھی مجال نہ ہو
یہاں جو سبزہ اگے، وہ ہمیشہ سبز رہے
اور ایسا سبز ، کہ جس کی کوٴی مثال نہ ہو
گھنی گھٹاٴیں یہاں ایسی بارشیں برسا ٴیں
کہ پتھروں سے بھی روٴید گی محال نہ ہو
خدا کرے کہ نہ خم ہو سر وقار وطن
اور اس کے حسن کو تشویش ماہ و سال نہ ہو
ہرایک فرد ہو تہذیب و فن کا اوج کمال
کوٴی ملول نہ ہو، کوٴی خستہ حال نہ ہو
خدا کرے کہ میرے اک بھی ہم وطن کےلیے
حیات جرم نہ ہو، زندگی وبال نہ ہو
خدا کرے کہ میری ارض پاک پر اترے
وہ فصل گل ، جسے اندیشہ زوال نہ ہو
شاعر: احمد ندیم قاسمی

سرخ گلابوں کی خوشبو

Muhammad Ammar Khan 15-9
  • نام محمد عمار خاں
  • کلاس 9
  • عمر سال 15

خدا کرے کہ میری ارض پاک پر اترے
وہ فصل گل ، جسے اندیشہ زوال نہ ہو
یہاں جو پھول کھلے، وہ کھلا رہے صدیوں
یہاں خزاں کو گزرنے کی بھی مجال نہ ہو
یہاں جو سبزہ اگے، وہ ہمیشہ سبز رہے
اور ایسا سبز ، کہ جس کی کوٴی مثال نہ ہو
گھنی گھٹاٴیں یہاں ایسی بارشیں برسا ٴیں
کہ پتھروں سے بھی روٴید گی محال نہ ہو
خدا کرے کہ نہ خم ہو سر وقار وطن
اور اس کے حسن کو تشویش ماہ و سال نہ ہو
ہرایک فرد ہو تہذیب و فن کا اوج کمال
کوٴی ملول نہ ہو، کوٴی خستہ حال نہ ہو
خدا کرے کہ میرے اک بھی ہم وطن کےلیے
حیات جرم نہ ہو، زندگی وبال نہ ہو
خدا کرے کہ میری ارض پاک پر اترے
وہ فصل گل ، جسے اندیشہ زوال نہ ہو
شاعر: احمد ندیم قاسمی

سرخ گلابوں کی خوشبو

Muhammad Ali Rehman 15-9
  • نام محمد علی رحمن
  • کلاس 9
  • عمر سال 15

خدا کرے کہ میری ارض پاک پر اترے
وہ فصل گل ، جسے اندیشہ زوال نہ ہو
یہاں جو پھول کھلے، وہ کھلا رہے صدیوں
یہاں خزاں کو گزرنے کی بھی مجال نہ ہو
یہاں جو سبزہ اگے، وہ ہمیشہ سبز رہے
اور ایسا سبز ، کہ جس کی کوٴی مثال نہ ہو
گھنی گھٹاٴیں یہاں ایسی بارشیں برسا ٴیں
کہ پتھروں سے بھی روٴید گی محال نہ ہو
خدا کرے کہ نہ خم ہو سر وقار وطن
اور اس کے حسن کو تشویش ماہ و سال نہ ہو
ہرایک فرد ہو تہذیب و فن کا اوج کمال
کوٴی ملول نہ ہو، کوٴی خستہ حال نہ ہو
خدا کرے کہ میرے اک بھی ہم وطن کےلیے
حیات جرم نہ ہو، زندگی وبال نہ ہو
خدا کرے کہ میری ارض پاک پر اترے
وہ فصل گل ، جسے اندیشہ زوال نہ ہو
شاعر: احمد ندیم قاسمی

سرخ گلابوں کی خوشبو

Mudassar Khan 25-lab assistant
  • نام مدثر خاں
  • کلاس lab Assistant
  • عمر سال 25

خدا کرے کہ میری ارض پاک پر اترے
وہ فصل گل ، جسے اندیشہ زوال نہ ہو
یہاں جو پھول کھلے، وہ کھلا رہے صدیوں
یہاں خزاں کو گزرنے کی بھی مجال نہ ہو
یہاں جو سبزہ اگے، وہ ہمیشہ سبز رہے
اور ایسا سبز ، کہ جس کی کوٴی مثال نہ ہو
گھنی گھٹاٴیں یہاں ایسی بارشیں برسا ٴیں
کہ پتھروں سے بھی روٴید گی محال نہ ہو
خدا کرے کہ نہ خم ہو سر وقار وطن
اور اس کے حسن کو تشویش ماہ و سال نہ ہو
ہرایک فرد ہو تہذیب و فن کا اوج کمال
کوٴی ملول نہ ہو، کوٴی خستہ حال نہ ہو
خدا کرے کہ میرے اک بھی ہم وطن کےلیے
حیات جرم نہ ہو، زندگی وبال نہ ہو
خدا کرے کہ میری ارض پاک پر اترے
وہ فصل گل ، جسے اندیشہ زوال نہ ہو
شاعر: احمد ندیم قاسمی

سرخ گلابوں کی خوشبو

Mouzzam Zulfiqar 15-8
  • نام معظم ذوالفقار
  • کلاس 8
  • عمر سال 15

خدا کرے کہ میری ارض پاک پر اترے
وہ فصل گل ، جسے اندیشہ زوال نہ ہو
یہاں جو پھول کھلے، وہ کھلا رہے صدیوں
یہاں خزاں کو گزرنے کی بھی مجال نہ ہو
یہاں جو سبزہ اگے، وہ ہمیشہ سبز رہے
اور ایسا سبز ، کہ جس کی کوٴی مثال نہ ہو
گھنی گھٹاٴیں یہاں ایسی بارشیں برسا ٴیں
کہ پتھروں سے بھی روٴید گی محال نہ ہو
خدا کرے کہ نہ خم ہو سر وقار وطن
اور اس کے حسن کو تشویش ماہ و سال نہ ہو
ہرایک فرد ہو تہذیب و فن کا اوج کمال
کوٴی ملول نہ ہو، کوٴی خستہ حال نہ ہو
خدا کرے کہ میرے اک بھی ہم وطن کےلیے
حیات جرم نہ ہو، زندگی وبال نہ ہو
خدا کرے کہ میری ارض پاک پر اترے
وہ فصل گل ، جسے اندیشہ زوال نہ ہو
شاعر: احمد ندیم قاسمی

سرخ گلابوں کی خوشبو

Mohsin Murtaza 15-8
  • نام محسن مرتضی
  • کلاس 8
  • عمر سال 15

خدا کرے کہ میری ارض پاک پر اترے
وہ فصل گل ، جسے اندیشہ زوال نہ ہو
یہاں جو پھول کھلے، وہ کھلا رہے صدیوں
یہاں خزاں کو گزرنے کی بھی مجال نہ ہو
یہاں جو سبزہ اگے، وہ ہمیشہ سبز رہے
اور ایسا سبز ، کہ جس کی کوٴی مثال نہ ہو
گھنی گھٹاٴیں یہاں ایسی بارشیں برسا ٴیں
کہ پتھروں سے بھی روٴید گی محال نہ ہو
خدا کرے کہ نہ خم ہو سر وقار وطن
اور اس کے حسن کو تشویش ماہ و سال نہ ہو
ہرایک فرد ہو تہذیب و فن کا اوج کمال
کوٴی ملول نہ ہو، کوٴی خستہ حال نہ ہو
خدا کرے کہ میرے اک بھی ہم وطن کےلیے
حیات جرم نہ ہو، زندگی وبال نہ ہو
خدا کرے کہ میری ارض پاک پر اترے
وہ فصل گل ، جسے اندیشہ زوال نہ ہو
شاعر: احمد ندیم قاسمی

سرخ گلابوں کی خوشبو

Mobeen Afridi  16-10
  • نام مبین آفریدی
  • کلاس 10
  • عمر سال 16

خدا کرے کہ میری ارض پاک پر اترے
وہ فصل گل ، جسے اندیشہ زوال نہ ہو
یہاں جو پھول کھلے، وہ کھلا رہے صدیوں
یہاں خزاں کو گزرنے کی بھی مجال نہ ہو
یہاں جو سبزہ اگے، وہ ہمیشہ سبز رہے
اور ایسا سبز ، کہ جس کی کوٴی مثال نہ ہو
گھنی گھٹاٴیں یہاں ایسی بارشیں برسا ٴیں
کہ پتھروں سے بھی روٴید گی محال نہ ہو
خدا کرے کہ نہ خم ہو سر وقار وطن
اور اس کے حسن کو تشویش ماہ و سال نہ ہو
ہرایک فرد ہو تہذیب و فن کا اوج کمال
کوٴی ملول نہ ہو، کوٴی خستہ حال نہ ہو
خدا کرے کہ میرے اک بھی ہم وطن کےلیے
حیات جرم نہ ہو، زندگی وبال نہ ہو
خدا کرے کہ میری ارض پاک پر اترے
وہ فصل گل ، جسے اندیشہ زوال نہ ہو
شاعر: احمد ندیم قاسمی

سرخ گلابوں کی خوشبو

Malik Usama  16-10
  • نام ملک اسامہ
  • کلاس 10
  • عمر سال 16

خدا کرے کہ میری ارض پاک پر اترے
وہ فصل گل ، جسے اندیشہ زوال نہ ہو
یہاں جو پھول کھلے، وہ کھلا رہے صدیوں
یہاں خزاں کو گزرنے کی بھی مجال نہ ہو
یہاں جو سبزہ اگے، وہ ہمیشہ سبز رہے
اور ایسا سبز ، کہ جس کی کوٴی مثال نہ ہو
گھنی گھٹاٴیں یہاں ایسی بارشیں برسا ٴیں
کہ پتھروں سے بھی روٴید گی محال نہ ہو
خدا کرے کہ نہ خم ہو سر وقار وطن
اور اس کے حسن کو تشویش ماہ و سال نہ ہو
ہرایک فرد ہو تہذیب و فن کا اوج کمال
کوٴی ملول نہ ہو، کوٴی خستہ حال نہ ہو
خدا کرے کہ میرے اک بھی ہم وطن کےلیے
حیات جرم نہ ہو، زندگی وبال نہ ہو
خدا کرے کہ میری ارض پاک پر اترے
وہ فصل گل ، جسے اندیشہ زوال نہ ہو
شاعر: احمد ندیم قاسمی

سرخ گلابوں کی خوشبو

Malik Taimoor  16-9
  • نام ملک تیمور
  • کلاس 9
  • عمر سال 16

خدا کرے کہ میری ارض پاک پر اترے
وہ فصل گل ، جسے اندیشہ زوال نہ ہو
یہاں جو پھول کھلے، وہ کھلا رہے صدیوں
یہاں خزاں کو گزرنے کی بھی مجال نہ ہو
یہاں جو سبزہ اگے، وہ ہمیشہ سبز رہے
اور ایسا سبز ، کہ جس کی کوٴی مثال نہ ہو
گھنی گھٹاٴیں یہاں ایسی بارشیں برسا ٴیں
کہ پتھروں سے بھی روٴید گی محال نہ ہو
خدا کرے کہ نہ خم ہو سر وقار وطن
اور اس کے حسن کو تشویش ماہ و سال نہ ہو
ہرایک فرد ہو تہذیب و فن کا اوج کمال
کوٴی ملول نہ ہو، کوٴی خستہ حال نہ ہو
خدا کرے کہ میرے اک بھی ہم وطن کےلیے
حیات جرم نہ ہو، زندگی وبال نہ ہو
خدا کرے کہ میری ارض پاک پر اترے
وہ فصل گل ، جسے اندیشہ زوال نہ ہو
شاعر: احمد ندیم قاسمی

سرخ گلابوں کی خوشبو

Maher Ali Azam 19-2nd  year
  • نام ماہر علی عزام
  • کلاس 2nd Year
  • عمر سال 19

خدا کرے کہ میری ارض پاک پر اترے
وہ فصل گل ، جسے اندیشہ زوال نہ ہو
یہاں جو پھول کھلے، وہ کھلا رہے صدیوں
یہاں خزاں کو گزرنے کی بھی مجال نہ ہو
یہاں جو سبزہ اگے، وہ ہمیشہ سبز رہے
اور ایسا سبز ، کہ جس کی کوٴی مثال نہ ہو
گھنی گھٹاٴیں یہاں ایسی بارشیں برسا ٴیں
کہ پتھروں سے بھی روٴید گی محال نہ ہو
خدا کرے کہ نہ خم ہو سر وقار وطن
اور اس کے حسن کو تشویش ماہ و سال نہ ہو
ہرایک فرد ہو تہذیب و فن کا اوج کمال
کوٴی ملول نہ ہو، کوٴی خستہ حال نہ ہو
خدا کرے کہ میرے اک بھی ہم وطن کےلیے
حیات جرم نہ ہو، زندگی وبال نہ ہو
خدا کرے کہ میری ارض پاک پر اترے
وہ فصل گل ، جسے اندیشہ زوال نہ ہو
شاعر: احمد ندیم قاسمی

سرخ گلابوں کی خوشبو

khusnood shehzab 14-8
  • نام خوشنود شاہزیب
  • کلاس 8
  • عمر سال 14

سانحہ پشاور اے پی ا یس کے شہدا کی پہلی برسی

میرے بچے تم سکول سے لوٹ کر کیوں نہیں آئے
تمہیں خبر ہے نا کہ ذرا سی دیر ہو جائے
تو ماں کس قدر بے چین ہوتی ہے
تو پھر تم نے اتنی دیر کیوں لگا دی!
میرے لعل! میں نے تو تمہیں اجلا یونیفارم پہنا کر
مکتب بھیجا تھا…اور تم خوشی خوشی
مکتب گئے تھے…!
پھر چھٹی کی گھنٹی کیوں نہیں بجی
تم گھر لوٹ کر کیوں نہیں آئے
یہ کون ہے جو لکڑی کے تابوت میں بند ہے؟
سرد آنکھیں اور زرد چہرہ!
موت کی بانہوں میں زندگی سے عاری
تم تو نہیں ہو…!
اور یہ میرے اندر باہر
جانے کیوں کہرام مچا ہے!
لکڑی کے تابوت میں بند‘ تم تو نہیں ہو!
آ جائو نا…
دیکھو تم اسکول سے واپس آ جائو نا

سرخ گلابوں کی خوشبو

Ishaq Amin 18-2nd  year
  • نام اسحاق امین
  • کلاس 2nd Year
  • عمر سال 18

-میرے بچے تم سکول سے لوٹ کر کیوں نہیں آئے
تمہیں خبر ہے نا کہ ذرا سی دیر ہو جائے
تو ماں کس قدر بے چین ہوتی ہے
تو پھر تم نے اتنی دیر کیوں لگا دی!
میرے لعل! میں نے تو تمہیں اجلا یونیفارم پہنا کر
مکتب بھیجا تھا…اور تم خوشی خوشی
مکتب گئے تھے…!
پھر چھٹی کی گھنٹی کیوں نہیں بجی
تم گھر لوٹ کر کیوں نہیں آئے
یہ کون ہے جو لکڑی کے تابوت میں بند ہے؟
سرد آنکھیں اور زرد چہرہ!
موت کی بانہوں میں زندگی سے عاری
تم تو نہیں ہو…!
آج مگر یہ سناٹا سا
گھر کے سارے کمروں میں کیوں پھیل گیا!
اور یہ میرے اندر باہر
جانے کیوں کہرام مچا ہے!
لکڑی کے تابوت میں بند‘ تم تو نہیں ہو!
آ جائو نا…
دیکھو تم اسکول سے واپس آ جائو نا

سرخ گلابوں کی خوشبو

Imran Ali 18-2nd year
  • نام عمران علی
  • کلاس 2nd Year
  • عمر سال 18

سانحہ پشاور اے پی ا یس کے شہدا پہلی کی برسی

میرے بچے تم سکول سے لوٹ کر کیوں نہیں آئے
تمہیں خبر ہے نا کہ ذرا سی دیر ہو جائے
تو ماں کس قدر بے چین ہوتی ہے
تو پھر تم نے اتنی دیر کیوں لگا دی!
میرے لعل! میں نے تو تمہیں اجلا یونیفارم پہنا کر
مکتب بھیجا تھا…اور تم خوشی خوشی
مکتب گئے تھے…!
پھر چھٹی کی گھنٹی کیوں نہیں بجی
تم گھر لوٹ کر کیوں نہیں آئے
یہ کون ہے جو لکڑی کے تابوت میں بند ہے؟
سرد آنکھیں اور زرد چہرہ!
موت کی بانہوں میں زندگی سے عاری
تم تو نہیں ہو…!
اور یہ میرے اندر باہر
جانے کیوں کہرام مچا ہے!
لکڑی کے تابوت میں بند‘ تم تو نہیں ہو!
آ جائو نا…
دیکھو تم اسکول سے واپس آ جائو نا

سرخ گلابوں کی خوشبو

Ibrar Zahid 18-2nd  year
  • نام ابرار زاہد
  • کلاس 2nd Year
  • عمر سال 18

سانحہ پشاور اے پی ا یس کی برسی

میرے بچے تم سکول سے لوٹ کر کیوں نہیں آئے
تمہیں خبر ہے نا کہ ذرا سی دیر ہو جائے
تو ماں کس قدر بے چین ہوتی ہے
تو پھر تم نے اتنی دیر کیوں لگا دی!
میرے لعل! میں نے تو تمہیں اجلا یونیفارم پہنا کر
مکتب بھیجا تھا…اور تم خوشی خوشی
مکتب گئے تھے…!
پھر چھٹی کی گھنٹی کیوں نہیں بجی
تم گھر لوٹ کر کیوں نہیں آئے
یہ کون ہے جو لکڑی کے تابوت میں بند ہے؟
سرد آنکھیں اور زرد چہرہ!
موت کی بانہوں میں زندگی سے عاری
تم تو نہیں ہو…!
اور یہ میرے اندر باہر
جانے کیوں کہرام مچا ہے!
لکڑی کے تابوت میں بند‘ تم تو نہیں ہو!
آ جائو نا…
دیکھو تم اسکول سے واپس آ جائو نا

سرخ گلابوں کی خوشبو

Huzaifa Aftab  16-10
  • نام حذیفہ آفتاب
  • کلاس 10
  • عمر سال 16

سانحہ اے پی ایس پشاور کے شہدا کی پہلی برسی

بھلا خوشبو بھی مرتی ہے

جنہیں اس گلستان میں
پھولوں کی صورت مہکنا تھا
انہیں کچھ ظالموں نے …
پھول بننے سے بہت پہلے مسل ڈالا
بھلا خوشبو بھی مرتی ہے
اسے تو پھیلنا ہے
دور تک سو پھیلتی ہی جائے گی
بھلا کوئی روشنی کو کاٹ پایا ہے
سومیرے پھول سے بچو
تمہاری روشنی ….
تاریک خانوں کو
سدا روشن ہی رکھے گی
اور آنے والے وقتوں میں
یہ خوشبو اور مہکے گی

شاعر: ابو محمد سرمد

سرخ گلابوں کی خوشبو

humayun iqbal 14-8
  • نام ہمایوں اقبال
  • کلاس 8
  • عمر سال 14

سانحہ اے پی ایس پشاور کے شہدا کی پہلی برسی

بھلا خوشبو بھی مرتی ہے

جنہیں اس گلستان میں
پھولوں کی صورت مہکنا تھا
انہیں کچھ ظالموں نے …
پھول بننے سے بہت پہلے مسل ڈالا
بھلا خوشبو بھی مرتی ہے
اسے تو پھیلنا ہے
دور تک سو پھیلتی ہی جائے گی
بھلا کوئی روشنی کو کاٹ پایا ہے
سومیرے پھول سے بچو
تمہاری روشنی ….
تاریک خانوں کو
سدا روشن ہی رکھے گی
اور آنے والے وقتوں میں
یہ خوشبو اور مہکے گی

شاعر: ابو محمد سرمد

سرخ گلابوں کی خوشبو

Hayatullah 15-8
  • نام حیات اللہ
  • کلاس 8
  • عمر سال 15

سانحہ اے پی ایس پشاور کے شہدا کی پہلی برسی

توحید کی امانت سینوںمیں ہے ہمارے

آساں نہیں مٹانا نام و نشان ہمارا

سرخ گلابوں کی خوشبو

Hassan Zeb  16-10
  • نام حسن زیب
  • کلاس 10
  • عمر سال 16

سانحہ اے پی ایس پشاور کے شہدا کی پہلی برسی

جنہیں اس گلستان میں
پھولوں کی صورت مہکنا تھا
انہیں کچھ ظالموں نے …
پھول بننے سے بہت پہلے مسل ڈالا
بھلا خوشبو بھی مرتی ہے
اسے تو پھیلنا ہے
دور تک سو پھیلتی ہی جائے گی
بھلا کوئی روشنی کو کاٹ پایا ہے
سومیرے پھول سے بچو
تمہاری روشنی ….
تاریک خانوں کو
سدا روشن ہی رکھے گی
اور آنے والے وقتوں میں
یہ خوشبو اور مہکے گی

شاعر: ابو محمد سرور

سرخ گلابوں کی خوشبو

hasnain sharif 14-8
  • نام حسنین شریف
  • کلاس 6
  • عمر سال 14

سانحہ اے پی ایس پشاور کے شہدا کی پہلی برسی

جنہیں اس گلستان میں
پھولوں کی صورت مہکنا تھا
انہیں کچھ ظالموں نے …
پھول بننے سے بہت پہلے مسل ڈالا
بھلا خوشبو بھی مرتی ہے
اسے تو پھیلنا ہے
دور تک سو پھیلتی ہی جائے گی
بھلا کوئی روشنی کو کاٹ پایا ہے
سومیرے پھول سے بچو
تمہاری روشنی ….
تاریک خانوں کو
سدا روشن ہی رکھے گی
اور آنے والے وقتوں میں
یہ خوشبو اور مہکے گی

شاعر: ابو محمد سرور

سرخ گلابوں کی خوشبو

hamza kamran 14-8
  • نام حمزہ کامران
  • کلاس 8
  • عمر سال 14

سانحہ اے پی ایس پشاور کے شہدا کی پہلی برسی

میرے قاتل کا عمامہ مری تصویر پہ رکھ

اب مرے قتل کا الزام نہ تقدیر پہ رکھ
ہاتھ سینے سے اٹھا، قبضہِ شمشیر پہ رکھ
میری تصویر پہ اے پھول چڑھانے والے
میرے قاتل کا عمامہ مری تصویر پہ رکھ
میری تحریر مرے خون سے لِکّھی گئی ہے
اب کسی جنگ کا نقشہ مری تحریر پہ رکھ
تو نے شاعر کو رجَز خوانی پہ مجبور کیا
تجھ میں ہمت ہے تو پہرا مری تقریر پہ رکھ
میری زنجیر کا لوہا ہے چھنک جاتا ہے
اب کوئی طوقِ اٹھا اور مری زنجیر پہ رکھ
ہو چکا حرفِ تسلّی کا تکلّف بے کار
لا کوئی اشکِ ندامت، کفِ دل گیر پہ رکھ

شاعر: عارف امام

سرخ گلابوں کی خوشبو

Hamza Ali Kakar 15-9
  • نام حمزہ علی کاکڑ
  • کلاس 9
  • عمر سال 15

سانحہ اے پی ایس پشاور کے شہدا کی پہلی برسی

اِن لعینوں کی علی ایسے مذمّت کی جائے

اِن پہ جاری کوئی اِن کی ہی شریعت کی جائے
اِن کے قبضوں سے مساجد کو چھڑا کر لوگو!
عشق والوں کے سپرد ان کی امانت کی جائے
ماوں بہنوں کے کلیجے نہیں پھٹتے دیکھے؟؟؟؟
تم جو کہتے ہو کہ ہاں ان سے رعایت کی جائے؟؟؟؟
ڈر لیا اِن سے جو ڈرنا تھا، بس اب اور نہیں
وقت آیا ھے کہ ختم اِن کی امارت کی جائے .. !!
جو اِنھیں مار کے آئے اسے اپنا سمجھیں
جو اِنھیں ختم کرے اس کی حمایت کی جائے
دین کو ننگ بنا ڈالا ہے بد بختوں نے
ان کے افعال سے جی بھر کے کراہت کی جائے
ہم نے تقدیس اِنھیں دی یہ مقدس ٹھرے
دور اب اِن کی غلط فہمی حرمت کی جائے
نام ظالم کا نہ لے اور مذمّت بھی کرے ؟؟
اس منافق کی ہر اک سانس پہ لعنت کی جائے

شاعر: علی زریون

سرخ گلابوں کی خوشبو

Hammad malik 13 -8
  • نام حماد ملک
  • کلاس 8
  • عمر سال 13

مرے لعل کی یاد

آ تجھے دامن بھر لوں
تیرے ماتھے پہ مہکتا ہوا بوسہ دے لوں
تیری تصویر سے اٹھتی ہوئی شہادت کی مہک
وہ ابدتاب مہک جس نے تری دھرتی کو
خرد افروز اجالوں کی سحر بخشی ہے
آنگن آنگن تری یادوں کے علم اٹھتے ہیں
ایک میں کیا،کہ ترے دیس کی ساری مائیں
ایک جاں ہو کے تری یاد کا دم بھرتی ہیں
یاد کا دن ہے، ترے علم شہادت کی قسم
تجھ سے کہنا ہے تو بس یہ کہ بھلائیں گے نہیں
تیری قربانی، تری فکر، ترے عزم کی لو
دل بہ دل نقش ہے
تاحشر رہے گی یونہی
جان جان! ماں تری یادوں کے بھی صدقے جائے

( علی زریون)

سرخ گلابوں کی خوشبو

hamid saif 14-8
  • نام حامد سیف
  • کلاس 8
  • عمر سال 14

سانحہ اے پی ایس پشاور کے شہدا کی پہلی برسی

مرے لعل کی یاد

آ تجھے دامن بھر لوں
تیرے ماتھے پہ مہکتا ہوا بوسہ دے لوں
تیری تصویر سے اٹھتی ہوئی شہادت کی مہک
وہ ابدتاب مہک جس نے تری دھرتی کو
خرد افروز اجالوں کی سحر بخشی ہے
آنگن آنگن تری یادوں کے علم اٹھتے ہیں
ایک میں کیا،کہ ترے دیس کی ساری مائیں
ایک جاں ہو کے تری یاد کا دم بھرتی ہیں
یاد کا دن ہے، ترے علم شہادت کی قسم
تجھ سے کہنا ہے تو بس یہ کہ بھلائیں گے نہیں
تیری قربانی، تری فکر، ترے عزم کی لو
دل بہ دل نقش ہے
تاحشر رہے گی یونہی
جان جان! ماں تری یادوں کے بھی صدقے جائے

( علی زریون)

سرخ گلابوں کی خوشبو

Hamid ali khan 13-8
  • نام حیدر علی خان
  • کلاس 6
  • عمر سال 13

سانحہ اے پی ایس پشاور کے شہدا کی پہلی برسی

مرے لعل کی یاد

آ تجھے دامن بھر لوں
تیرے ماتھے پہ مہکتا ہوا بوسہ دے لوں
تیری تصویر سے اٹھتی ہوئی شہادت کی مہک
وہ ابدتاب مہک جس نے تری دھرتی کو
خرد افروز اجالوں کی سحر بخشی ہے
آنگن آنگن تری یادوں کے علم اٹھتے ہیں
ایک میں کیا،کہ ترے دیس کی ساری مائیں
ایک جاں ہو کے تری یاد کا دم بھرتی ہیں
یاد کا دن ہے، ترے علم شہادت کی قسم
تجھ سے کہنا ہے تو بس یہ کہ بھلائیں گے نہیں
تیری قربانی، تری فکر، ترے عزم کی لو
دل بہ دل نقش ہے
تاحشر رہے گی یونہی
جان جان! ماں تری یادوں کے بھی صدقے جائے

( علی زریون)

سرخ گلابوں کی خوشبو

Hajra Sharif 28- teacher
  • نام حاجرہ شریف
  • کلاس Teacher
  • عمر سال 28

چار جانب ہیں بِپھری ھوئی وحشتیں
تا بہ حد ِ نظر یہ زمیں سرخ ہے۔۔۔آسماں سرخ ہے
پھول جیسے بدن
خاک پر اِس طرح سے بکھیرے گئے
روح میں اِک اذیت اتر آئی ہے
شہر پر اِک قیامت اتر آئی ہے
ظالمو ! وحشیو ! بھیڑیو !
کچھ تو خوف ِ خدا۔۔۔۔۔!
تم کو قہر ِ خدا ک ذرا ڈر نہیں ؟
کتنی ماوں کے دِل تم نے چھلنی کئے
تم کو انسان کہنا ھے توہین ِ اِنسانیت
تم تو ظالم ہو ، جابرہو ، فرعونیت کے طرفدار ہو۔۔۔۔!
تم درندوں سے بڑھ کر درندے ہو۔۔۔۔۔۔مَت بھولنا !!
رَب نے لکھ دیں تمہارے مقدر میں ذلت کی گہرائیاں
تم اَبد تک۔۔۔۔!لعینوں کی صَف میں گِنے جاو گے۔۔۔۔۔

شاعرہ: ناز بٹ

سرخ گلابوں کی خوشبو

Haider Amin 15-9
  • نام حیدر امین
  • کلاس 9
  • عمر سال 15

سانحہ اے پی ایس پشاور کے شہدا کی پہلی برسی

چار جانب ہیں بِپھری ھوئی وحشتیں
تا بہ حد ِ نظر یہ زمیں سرخ ہے۔۔۔آسماں سرخ ہے
پھول جیسے بدن
خاک پر اِس طرح سے بکھیرے گئے
روح میں اِک اذیت اتر آئی ہے
شہر پر اِک قیامت اتر آئی ہے
ظالمو ! وحشیو ! بھیڑیو !
کچھ تو خوف ِ خدا۔۔۔۔۔!
تم کو قہر ِ خدا ک ذرا ڈر نہیں ؟
کتنی ماوں کے دِل تم نے چھلنی کئے
تم کو انسان کہنا ھے توہین ِ اِنسانیت
تم تو ظالم ہو ، جابرہو ، فرعونیت کے طرفدار ہو۔۔۔۔!
تم درندوں سے بڑھ کر درندے ہو۔۔۔۔۔۔مَت بھولنا !!
رَب نے لکھ دیں تمہارے مقدر میں ذلت کی گہرائیاں
تم اَبد تک۔۔۔۔!لعینوں کی صَف میں گِنے جاو گے۔۔۔۔۔

شاعرہ: ناز بٹ

سرخ گلابوں کی خوشبو

Hafsa Khush 23-teacher
  • نام حفصہ خوش
  • کلاس Teacher
  • عمر سال 23

سانحہ اے پی ایس پشاور کے شہدا کی پہلی برسی

مرکز علم پر نسلِ بو جہل کا
کیسا سفاک اور خونی حملہ ہوا
آسماں دیکھتا رہ گیا ماجرا
چار جانب تھی بس گولیوں کی صدا
قتل کرتی ہے معصومیت بے گناہ
کربلا تا پشاور یزیدی سپاہ
بو لہو کی فضا میں بسی چار سو
جیت پر اپنی خوش ہو رہا ہے عدو
خوں میں بچوں نے اپنے کیا خود وضو
پیشِ ارضِ وطن مائیں ہیں سرخرو
بربریت ہوئی وہ خدا کی پناہ
کربلا تا پشاور یزیدی سپاہ

شاعر:صفدر ہمدانی

سرخ گلابوں کی خوشبو

ghaasan khan 14-8
  • نام غسان خاں
  • کلاس 8
  • عمر سال 14

سانحہ اے پی ایس پشاور کے شہدا کی پہلی برسی

سُوناگھر چھوڑ گیا مجھ کو بسانے والا
کھو گیا ہے تو کہاں دل میں سمانے والا
ڈھونڈتی ہوں مَیں اسے رات کے سناٹوں میں
اِک ستارہ ہے جو پلکوں پہ سجانے والا
اِک ہنسی ہے جو مِرے لب سے سسکتی نکلی
آ ہی جائے گا بہت مجھ کو ہنسانے والا
نیند یوں روٹھ گئی ہے کہ بہت ممکن ہے
سو نہ جائے وہ کہیں مجھ کو جگانے والا
تیری ہر ضد بھی مجھے جان سے پیاری ہوگی
گر تو آ جائے مجھے پھر سے رُلانے والا

شاعر: ندا فاضلی

سرخ گلابوں کی خوشبو

furqan haider 14-8
  • نام فرقان حیدر
  • کلاس 8
  • عمر سال 14

سانحہ اے پی ایس پشاور کے شہدا کی پہلی برسی

آئو ماتم کریں عزا دارو

پھول مسلے گئے ہیں گلشن میں

سرخ گلابوں کی خوشبو

Ehsan ullah Driver 22-driver
  • نام احسان اللہ
  • کلاس Driver
  • عمر سال 22

سانحہ اے پی ایس کے شہدا کی برسی

شہید کی جو موت ہے

وہ قوم کی حیات ہے

سرخ گلابوں کی خوشبو

Fahid hussain 13-8
  • نام فرحت حسین
  • کلاس 8
  • عمر سال 13

Maa kaash mai aj school na jaata,
-Shayad tumhe phir se dekh pata
Teri awaz sunney ko kaan taras rahe hai,
Dekho na maa baarudo k gole baras rahe hai
Saare baache apni apni maa ko pukar rahe hai,
Maa ye log hume kyu maar rahe hai
Tiffin me di tumari roti bhi nai khaai hai,
Maa aaj golio ne meri bhuk mitaai hai
Papa se kehna ab mujhe school lene na aaye,
Dekh nahi paunga unhe mera taboot uthaaye
Mere jaane se apna hausla mat khona,
Maa mujhse bichhad kar tum mat rona
Mere khilone ,meri kitabe , mera basta,
Janta hu teri aankhe dekhti rahegi roz mera rasta
bhaiyya se kehna uska sathi rooth gaya hai,
bachpan ka humara sath chhott gaya hai
Didi se kehna mere liye aansu na bahaye,
Roz meri tasveer ko chota sa phhol chadaye
Teri yaado me, khwabo me, zikr me, reh jaunga,
Maa mai ab kabhi wapas nahi aaunga
Maa mai ab kabhi wapas nahi aaunga

سرخ گلابوں کی خوشبو

Farhat bibi 39-teacher
  • نام فرحت بی بی
  • کلاس Teacher
  • عمر سال 39

سانحہ اے پی ایس پشاور کے شہپدا کی پہلی برسی

سخن دلنواز ، جاں پر سوز

یہی ہے رخت سفر میر کارواں کے لئے

سرخ گلابوں کی خوشبو

fazal raheem 14-8
  • نام فضل رحیم
  • کلاس 8
  • عمر سال 14

سانحہ اے پی ایس پشاور کے شہدا کی پہلی برسی

میں اکثر اسے کہا کرتی تھی کہ تم کھانا نہیں کھاتے، ہوم ورک بھی ٹائم پر نہیں کرتے، ایسے تو گندے بچے کیا کرتے ہیں، جو بچے ایسا کرتے ہیں، ان کے پاس باگڑ بلے آجاتے ہیں، جن کی شکلیں خوف ناک، لمبے بال، بڑے بڑے دانت ہوتے ہیں، وہ پہاڑوں سے اترتے ہیں اور آکر بچوں کو باندھے دیتے ہیں، انہیں مارتے ہیں، ان کو زخم لگاتے ہیں، انہیں معصوم معصوم ننھے بچوں پر ترس نہیں آتا، ان کے دل کسی آہ و معافی اور مان سے نہیں پگھلتے۔ وہ بس بچوں کو اپنے غصے کا نشانہ بناتے ہیں اور تکلیف دے کر خوشی محسوس کرتے ہیں، تو کیا تم چاہو گے کہ ایسے باگڑ بلے تمھارے پاس آئیں اور تمہیں دکھ اور تکلیف دیں؟

کالم نگار: امبرین اسکندر

سرخ گلابوں کی خوشبو

Benish Umer  30-teacher
  • نام بینش عمر
  • کلاس Teacer
  • عمر سال 30

سانحہ اے پی ایس پشاور کے شہدا کی پہلی برسی

بے چارگاں کے آخری دیدار کی قسَم
صبرِ حسینؑ و حیدرِ کرّار کی قسَم
دشمن کو ڈھونڈتی ہوئی تلوار کی قسَم
فارس ! ھمارے لشکرِ جرّار کی قسَم
سوئیں گے چَین سے نہ کبھی سوگوار اب
ماریں گے ایک ایک کے بدلے ہزار اب

سرخ گلابوں کی خوشبو

fahad hussain 14-8
  • نام ارشاد حسین
  • کلاس 8
  • عمر سال 14

سانحہ اے پی ایس پشاور کے شہدا کی پہلی برسی

ماں! یونیفارم پر تھوڑی سیاہی گر گئی تھی ، ڈانٹنا مت
ماں! یونیفارم لال ہو گیا ہے خون بہہ کر، رونا مت

سرخ گلابوں کی خوشبو

Basit Ali Sardar 15-8
  • نام باسط علی سردار
  • کلاس 8
  • عمر سال 15

سانحہ اے پی ایس پشاور کے شہدا کی پہلی برسی

اے چاند
جب وہ تیری طرف دیکھیں
تو انہیں یاد دلانا
مدھر سے کچھ گیت سنانا
اور کہنا
تمہیں کوئی یا دکرتا ہے
تیری آرزو ، تیری امید کرتا ہے
کوئی آج بھی
تمہیں دیکھ کر عید کرتا ہے

سرخ گلابوں کی خوشبو

baqir ali 14-8
  • نام باقر علی
  • کلاس 8
  • عمر سال 14

سانحہ اے پی ایس پشاور کے شہدا کی پہلی برسی

عروج یونہی کسی کو نہیں ملا کرتا

زہے نصیب کہ ملت کی آبرو کے لئے

زمیں پہ خون کے گلشن سجائے جاتے ہیں

شفق میں رنگِ شہادت کھلائے جاتے ہیں

شاعر: پروفیسر حمید کوثر

سرخ گلابوں کی خوشبو

Bahram Ahmed Khan 15-10
  • نام بہرام احمد
  • کلاس 10
  • عمر سال 15

سانحہ اے پی ایس پشاور کے شہدا کی پہلی برسی

آج کے جانگسل واقعہ نے مجھے اندر سے پاش پاش کر دیا ہے ۔میں اکثر سوچا کرتی تھی دنیا میں سب سے بڑا سانحہ کیا ہو سکتا ہے ۔۔ آہ ۔۔۔ وہ سانحہ بھی آج ہو گیا ۔ آج میں پاکستان کے ہر بچے کے سامنے شرمندہ کھڑی ہوں ۔۔ ان سے ہر حساس انسان کی طرف سے معافی کی طلبگار ہوں ۔۔ پیارے بچو ہمیں معاف کر دو جو تمہیں لمحہ لمحہ مرتے دیکھ رہے ہیں ۔۔ ہمیں معاف کر دو ہم تمہیں پڑھنے کے لئے بجلی نہ فراہم کر سکے ، ہم تمہیں پینے کے لیئے صاف پانی نہ مہیا کر سکے ، ہم تمہیں اسکول جانے لیئے یونیفارم ایک سے دو نہ دے سکے ، ہم تمہیں ٹرانسپورٹ کی سہولت نہ دے سکے ۔۔ ہم تمہارے خواب نہ بچا سکے ۔ ہم تمہیں تحفظ نہ دے سکے ۔ ہمیں معاف کر دو ہم اس وقت بھی اپنی نسل کو اپنی بزدلی اور سیاسی منفاقت کی نظر کر رہے ہیں ۔۔ روز حشر ہم سب تمہارے جوابدہ ہونگے کہ ہم تمہارے قاتلوں کو سزا بھی نہ دلوا سکیں گے

کالم نگار: ڈاکٹر نگہت نسیم سڈنی

سرخ گلابوں کی خوشبو

Asfand khan 15-10
  • نام اسفند خاں
  • کلاس 10
  • عمر سال 15

سانحہ اے پی ایس پشاور کے شہدا کی پہلی برسی

پشاور میں شہید ہونے والے بچوں کے لئے دُعائے مغفرت کرنے کی کوئی ضرورت نہیں، سولہ سالہ بچہ کیا گناہ کر سکتا ہے، پاکستان کے سیاستدانوں سے درخواست ہے کہ وہ ان معصوم بچوں کے بعد از مرگ حشر کی فکر نہ کریں، جب وہ دُعا کے لئے ہاتھ بلند کریں تو وہ اپنی بخشش کے لئے دُعا گو ہوں اور انہیں اپنے ہاتھ بغور دیکھنے چاہئیں تاکہ کہیں ان کے ہاتھ بھی خون آلودہ تو نہیں؟؟؟

کالم نگار : محمد حبیف

سرخ گلابوں کی خوشبو

Azaan toraylay 13-9
  • نام اذان توریلے
  • کلاس 9
  • عمر سال 13

سانحہ اے پی ایس پشاور کے شہدا کی پہلی برسی

آج پاکستا ن میں غم کےساتھ ایک غصہ بھی پایا جاتا ہے یہ غصہ ان کے خلاف ہے جو دہشت گردی سے منہ موڑ لیتے ہیں اور جس پر ہمیں انسانی جانوں کے ذریعے اس کی قیمت ادا کرنی پڑیت ہے۔ یہ غصہ ان پر بھی ہے جو قاتلوں کے سامنے خاموشی اختیار کر لیتے ہیں ان کے نام سے مذمت کرنے سے گریز کرتے ہیں یہغصہ ان پر بھی ہے جو معصوم افراد کی اموات پر مصلحت پسندی کا شکار ہو جاتے ہیں۔ےہ غصہ ہے! یہ غصہ ہے اور شرمساری بھی یہ پڑھ کر شرم محسوس ہوتی ہے کہ ان تین انسٹرکٹر کو بھی اس وقت قتل کیا گیا جس وقت وہ آرمی پبلک اسکول میں بچوں کو ہنگامی طبی امداد کی تربیت دے رہے تھے، یہ معلوم ہونے پر بھی شرم محسوس ہوئی کہ جن بچوں اور دیگر کو قتل کیا گیا ان کے سروں میںگولیاں ماری گئیں، ہم ان کے سامنے شرمسار ہیں کہ ہم ان کے ساتھ معذرت بھی نہیں کر سکتے۔ اس پر بھی شرم آتی ہے کہ ملک کے شہری انہیں تحفظ فراہم بھی نہیں کر سکے۔
! نوحہ کی شاعری جو غم کی علامت ہے،آج ہم پاکستان میں ان اموات پر نوحہ کی شاعری پڑھ رہے ہیں تاکہ ہم بے انتہا غمزدہ لوگوں کی دلجوئی کے لئے نوحہ خواں ہوں۔۔۔۔

تحریر : فاظمہ بھٹو

سرخ گلابوں کی خوشبو

awais nasir 14-8
  • نام اویس ناصر
  • کلاس 8
  • عمر سال 14

سانحہ اے پی ایس پشاور کے شہدا کی پہلی برسی

میرے قاتل کا عمامہ مری تصویر پہ رکھ

اب مرے قتل کا الزام نہ تقدیر پہ رکھ
ہاتھ سینے سے اٹھا، قبضہِ شمشیر پہ رکھ
میری تصویر پہ اے پھول چڑھانے والے
میرے قاتل کا عمامہ مری تصویر پہ رکھ
میری تحریر مرے خون سے لِکّھی گئی ہے
اب کسی جنگ کا نقشہ مری تحریر پہ رکھ
تو نے شاعر کو رجَز خوانی پہ مجبور کیا
تجھ میں ہمت ہے تو پہرا مری تقریر پہ رکھ
میری زنجیر کا لوہا ہے چھنک جاتا ہے
اب کوئی طوقِ اٹھا اور مری زنجیر پہ رکھ
ہو چکا حرفِ تسلّی کا تکلّف بے کار
لا کوئی اشکِ ندامت، کفِ دل گیر پہ رکھ

شاعر: عارف امام

سرخ گلابوں کی خوشبو

awais ahmed 14-8
  • نام اویس احمد
  • کلاس 8
  • عمر سال 14

سانحہ اے پی ایس پشاور کی پہلی برسی

قلم بار بار رک رہا ہے،
معصوم چہرے نگاہوں کے سامنے سے نہیں ہٹتے۔۔
سکول یونیفارم مجھ سے بہت سے سوالات کر رہی ہے،
خون میں ڈوبی کتابیں بہت کچھ پوچھ رہی ہیں،
اپنے جگر کے ٹکڑوں کو ڈھونڈتی ماوں کے چہرے
میرے ذہن پر دستکیں دے رہے ہیں،
بہنوں کے بین مجھے قدم نہیں اٹھانے دیتے

شاعر.: محمود شام

سرخ گلابوں کی خوشبو

atif ur rehman 14-9
  • نام عاطف الرحمن
  • کلاس 9
  • عمر سال 14

سانحہ اے پی ایس کی پہلی برسی

ہچکیوں سے ظالموں کے ظلم پر رویا فلک
خون معصوماں کی تھی تاروں میں رخشندہ جھلک
چاند کے چہرے میں ہے معصوم چہروں کی چمک
باپ کے سینے پہ بیٹے کی ہوئی کندہ کسک
آنسووں کی بارشوں میں چہرے روشن ہو گئے
مطمئن کس شان سے قبروں میں بچے سو گئے

یوں اتاری ظلم کے چہرے سے ظلمت کی نقاب
چومنے کو ہاتھ اترا آسماں سے آفتاب
ڈال دی اپنے لہو سے پھر بنائے انقلاب
کھل اٹھا بچپن میں معصوموں کے چہروں پر شباب
عزم اصغر پھر سے لو اک بار تازہ ہو گیا
خوں نکل کر جسم سے چہرے کا غازہ ہو گیا

شاعر: سید صفدر ہمدانی

سرخ گلابوں کی خوشبو

Asad aziz 15-8
  • نام اسد رضا
  • کلاس 8
  • عمر سال 15

سانحہ اے پی ایس پشاور کے شہدا کی پہلی برسی

موت اس صورت سے آئے گی کسے تھا یہ گمان
غم سے لرزاں ہے زمیں نوحہ کناں ہے آسمان
بن گئی تھی دوستداری علم سے اک امتحان
طالبان علم کے قاتل بھی نکلے طالبان
فرط غم میں جوں ہوائیں سسکیاں لینے لگیں
خوشبوئیں،کلیاں ،فضائیں ہچکیاں لینے لگیں

پہن کر اجلے کفن جنت کی جانب چل دیئے
حشر کی اس تشنگی میں جام کوثر کے پیئے
صبر کے دھاگے سے سارے زخم سینے کے سیئے
طے ہوا کہ نونہالان وطن مر کر جیئےپ
ھول سے بچوں کو یہ کس کی نظر ہے کھا گئی
غم کی بدلی کس طرح ہے شہر دل پہ چھا گئی

شاعر: سید صفدر ہمدانی

سرخ گلابوں کی خوشبو

ali abbas 14-9
  • نام علی عباس
  • کلاس 9
  • عمر سال 14

سانحہ اے پی ایس پشاور کی پہلی برسی

بدلے کی آگ اپنی جگہ ہے مگر یہ غم
ہم سَو برَس بھی جی لیں تو ہو پائے گا نہ کم
ہر روز یاد آئے گا یہ ظلم یہ سِتم
تا عمر جانے والوں کو رویا کریں گے ہم
آنکھوں سے وہ جدا سہی ، دِل سے پرے نہیں
ہاں ،ہم ہیں کم نظر ، شہَدا تو مرے نہیں

اَے کربلائے نَو ! ترے قربان ، صبر کر
تجھ پر فدا ہیں میرے دل و جان ، صبر کر
رو رو کے ہو نہ جائے تو ہلکان ، صبر کر
میرے پشاورا ! مرے بے جان ! صبر کر
ماتم ہے ، غم ہے ، سوگ ہے ، آنسو ہیں ، بَین ہے
شہرِ پشاور آج سے شہرِ حسینؑ ہے

شاعر: رحمن فارس

سرخ گلابوں کی خوشبو

Akbar Zaman 40-head clerk
  • نام اکبر خان
  • کلاس Head Clerk
  • عمر سال 40

سانحہ اے پی ایس کی پہلی برسی

ناحق بہے جو خون تو کانپ اٹھتا ہے فلک
بے چارگاں کی آہ تو جاتی ہے عرش تک
ظالم کی موت ہے دلِ مظلوم کی کسک
اِن قاتلوں کے باب میں رکھیو نہ کوئی شک
جِس میں اِنہیں جلانا خدا کا اصول پے
اس آگ آگے نارِ جہنّم بھی پھ±ول ہے

اِن ظالموں کا ظُلم تو خود ظلم کو رُلائے
لعنت خود اِن کے لعنتی چہروں سے منہ چھپائے
نفرت بھی اِن کو دیکھے تو نفرت سے تھوک جائے
گالی اِنہیں مِلے بھی تو گالی کو شرم آئے
شیطاں بھی اِن کے باطنِ بد کو سزائیں دیں
خود بد دعائیں اِن کو سدا بد دعائیں دیں

شاعر؛ رحمن فارس

سرخ گلابوں کی خوشبو

Aimal Khan 18-2nd year
  • نام ایمل خاں
  • کلاس 2nd Year
  • عمر سال 18

سانحہ اے پی ایس پشاور کی پہلی برسی

ہر گل عذار کتنے دِلوں کا سرور تھا
نخلِ امید کا بڑا خوش رنگ بور تھا
ہر چاند والدین کی آنکھوں کا نور تھا
بھائی کا زورِ بازو ، بہَن کا غرور تھا
سَو منَّتوں ،ہزار مرادوں کے پھل تھے وہ
نعم البدل مِلے گا کہاں ؟ بے بدَل تھے وہ

کِس مان سے سنوارا تھا ماوں نے صبح دم
کِس بھولپن سے جانبِ مقتل اٹھے قدم
تھامے قلم کتاب تو سَر ہوگئے قلم
جِس دم اٹھا کے لائے گئے ، جان تھی نہ دم
کیا خوب درس گاہ تھی ، کیا امتحاں لِیا !
غم کا سبَق پڑھائے بِنا امتحاں لیا

شاعر: رحمن فارس

سرخ گلابوں کی خوشبو

Ahmed Mujtaba 15-8
  • نام احمد مجتبی
  • کلاس 8
  • عمر سال 15

اے پی ایس سانحہ کی پہلی برسی

تسلیم ہے کہ موت سے ممکن نہیں فَرار
مانا کہ زندگی نہیں بالکل وفا شعار۔!
ھر منبعِ حیات پہ ہوگا اجل کا وار۔۔۔ !!
خوشبو ھے دیرپا نہ کوئی پھول پائیدار۔۔ !
لیکن ابھی یہ رنگ تو کچّے تھے ،ہائے ہائے
کم سِن تھے ، بے گناہ تھے، بچّے تھے ، ہائے ہائے

تھے چودھویں کے چاند وہ معصوم نونہال
عمریں قلیل ، ننھے بدن ، بھولے خدّو خال
بے فکریوں کا دَور تھا ، بچپن کے ماہ و سال
وا حسرتا کہ ہوگئے اپنے لہو میں لال !
گل پَیرھن تھے اور کفن پوش ہوگئے
گودی سے اترے ، قبر میں روپوش ھوگئے

شاعر: رحمن فارس

سرخ گلابوں کی خوشبو

Ahmed ilahi 15-9
  • نام احمد الہی
  • کلاس 9
  • عمر سال 15

اے پی ایس پشاور کے سانحہ کی پہلی برسی

بے چارگاں کے آخری دیدار کی قسَم
صبرِ حسینؑ و حیدرِ کرّار کی قسَم
دشمن کو ڈھونڈتی ہوئی تلوار کی قسَم
فارس ! ھمارے لشکرِ جرّار کی قسَم
سوئیں گے چَین سے نہ کبھی سوگوار اب
ماریں گے ایک ایک کے بدلے ہزار اب

بدلے کی آگ اپنی جگہ ہے مگر یہ غم
ہم سَو برَس بھی جی لیں تو ہو پائے گا نہ کم
ہر روز یاد آئے گا یہ ظلم یہ سِتم
تا عمر جانے والوں کو رویا کریں گے ہم
آنکھوں سے وہ جدا سہی ، دِل سے پرے نہیں
ہاں ،ہم ہیں کم نظر ، شہَدا تو مرے نہیں

شاعر: رحمن فارس

سرخ گلابوں کی خوشبو

Abdul Azam Afridi 20-2nd year
  • نام عبداللہ عزام آفریدی
  • کلاس 2nd Year
  • عمر سال 20

اے پی ایس پشاور کے سانحہ کی پہلی برسی

ٕقلم کارو…!
تمہاری آزمائش کا وقت آن پہونچا ہے
شاعرو…!
استعارات اور اشاروں کنایوں کا وقت نکل چکا ہے
ادیبو…!
لگی لپٹی کے بغیر لکھو،
خطیبو..!
بولو

شاعر:جاوید صبا

سرخ گلابوں کی خوشبو

harrris nawaz 14-8
  • نام حارث نواز
  • کلاس 8
  • عمر سال 14

اے پی ایس پشاور کے سانحہ کے شہدا کی پہلی برسی

جہاں تم چومتی تھیں ماں وہاں تک آگیا تھا وہ

بڑا دشمن بنا پھرتا ہے جو بچوں سے لڑتا ہے
بتا کیا پوچھتا ہے وہ کتابوں میں ملوں گامَیں
کئے ماں سے ہیں جو مَیں نے کہ وعدوں میں ملوں گا مَیں
مَیں آنے والا کل ہوں وہ مجھے کیوں آج مارے گا
یہ اس کا وہم ہوگا کہ وہ اَیسے خواب مارے گا
تمہارا خون ہوں نا اس لئے اچھا لڑا ہوں مَیں
بتا آیا ہوں دشمن کو کہ اس سے تو بڑا ہوں مَیں
تو جب آتے ہوئے مجھ کو گلےتم نےلگایا تھا
امان اللہ کہا مجھ کو مِرا بیٹا بلایا تھا
خدا کے امن کی رہ میں کہاں سے آگیا تھا وہ
جہاں تم چومتی تھیں ماں وہاں تک آگیا تھا وہ
مجھے جانا پڑا ہے پر مرا بھائی کرے گا اب
مَیں جتنا نہ پڑھا وہ سب مِرا بھائی پڑھے گا اب
ابھی بابا بھی باقی ہیں کہاں تک جا سکو گے تم
ابھی وعدہ رہا تم سے یہاں نہ آسکو گے تم

سرخ گلابوں کی خوشبو

gulsher 13-8
  • نام گل شیر
  • کلاس 8
  • عمر سال 13

سانحہ اے پی ایس پشاور کی پہلی برسی

طالبان علم کے قاتل بھی نکلے طالبان

موت اس صورت سے آئے گی کسے تھا یہ گمان
غم سے لرزاں ہے زمیں نوحہ کناں ہے آسمان
بن گئی تھی دوستداری علم سے اک امتحان
طالبان علم کے قاتل بھی نکلے طالبان
فرط غم میں جوں ہوائیں سسکیاں لینے لگیں
خوشبوئیں،کلیاں ،فضائیں ہچکیاں لینے لگیں

پہن کر اجلے کفن جنت کی جانب چل دیئے
حشر کی اس تشنگی میں جام کوثر کے پیئے
صبر کے دھاگے سے سارے زخم سینے کے سیئے
طے ہوا کہ نونہالان وطن مر کر جیئے
ھول سے بچوں کو یہ کس کی نظر ہے کھا گئی
غم کی بدلی کس طرح ہے شہر دل پہ چھا گئی

آنسووں کی بارشوں میں چہرے روشن ہو گئے
مطمئن کس شان سے قبروں میں بچے سو گئے

شاعر: سید صفدر ہمدانی

سرخ گلابوں کی خوشبو

Farhan Jalal 15-10
  • نام فرحان جلال
  • کلاس 10
  • عمر سال 15

ہیں سرخ دیے امیدوں کے

ہتھیار اٹھانے والو سنو
تم قتل نہیں کرپا ے انھیں
اسکول کے کمروں میں جو ملے
وہ جسم نہیں تھے، خواب تھے وہ
وہ سانس نہیں تھے، آس تھے وہ
اک عزم جنوں کا پاسس تھے وہ
راہداری خیرپہ ننھے قدم
ہیں موج با موج رواں اب بھی
ہر کھیل کا میداں اب ہے بنا
اک سازدما دم جذبوں کا
اب جھولا جھولتی نرم ہوا
ہے گیت مسلسل خوابوں کا
اس فرش پہ دیکھو خون نہیں
ہیں سرخ دیے امیدوں کے
اک عزم ہے زندہ رہنے کا
اک جوش ہے آگے بڑھنے کا
ہتھیار اٹھانے والو سنو
تم قتل نہیں کرپا ے انھیں
شاعر:شارق علی

سرخ گلابوں کی خوشبو

rizwan sarreer 13-8
  • نام رضوان سریر
  • کلاس 8
  • عمر سال 13

سانحہ پشاور اے پی ایس کی پہلی برسی

اِک ستارہ ہے جو پلکوں پہ سجانے والا

سُوناگھر چھوڑ گیا مجھ کو بسانے والا
کھو گیا ہے تو کہاں دل میں سمانے والا
ڈھونڈتی ہوں مَیں اسے رات کے سناٹوں میں
اِک ستارہ ہے جو پلکوں پہ سجانے والا
اِک ہنسی ہے جو مِرے لب سے سسکتی نکلی
آ ہی جائے گا بہت مجھ کو ہنسانے والا
نیند یوں روٹھ گئی ہے کہ بہت ممکن ہے
سو نہ جائے وہ کہیں مجھ کو جگانے والا
تیری ہر ضد بھی مجھے جان سے پیاری ہوگی
گر تو آ جائے مجھے پھر سے رُلانے والا

شاعرہ: ندا فاضلی

سرخ گلابوں کی خوشبو

uzair ali 14-8
  • نام عزیر علی
  • کلاس 8
  • عمر سال 14

کون سے پھو ل قبر کے اندر رکھنے ہیں اور کون سے با ہر؟
پھا ڑ کر پھینک دیں گے
وہ تما م پر سے جو مصنو عی آ نسو و ں سے لکھے گئے ہیں
ہماری ماوں کو صبر کی دعا دینے والے
اپنے وہ بیٹے ان کی جھو لیو ں میں کیو ں نہیں رکھتے
جن کی بھیگتی ہو ئیں مسو ں پہ
زندگی اپنا خانہ بد لتی ہے
گھر و ں میں دبک کر نو حے پڑ ھنے والے
اپنی با ری پہ نعرے اٹھا کر
سڑکو ں سے چمٹ جا تے ہیں
جنا زہ گا ہ خا لی ہو چکی ہے
لیکن پھو لو ں کی دکا نو ں پہ رش
ختم ہو نے میں نہیں آ رہا
لوگ تذبذب میں مبتلا ہیں کہ
کون سے پھو ل قبر کے اندر رکھنے ہیں
اور کون سے با ہر؟
خدا یا !
شاعرہ: سدرہ سحر ارمان

سرخ گلابوں کی خوشبو

ziaullah islam 12-8
  • نام ضیا اللہ
  • کلاس 8
  • عمر سال 12

میرے بچے تم سکول سے لوٹ کر کیوں نہیں آئے
تمہیں خبر ہے نا کہ ذرا سی دیر ہو جائے
تو ماں کس قدر بے چین ہوتی ہے
تو پھر تم نے اتنی دیر کیوں لگا دی!
میرے لعل! میں نے تو تمہیں اجلا یونیفارم پہنا کر
مکتب بھیجا تھا…اور تم خوشی خوشی
مکتب گئے تھے…!
پھر چھٹی کی گھنٹی کیوں نہیں بجی
تم گھر لوٹ کر کیوں نہیں آئے
یہ کون ہے جو لکڑی کے تابوت میں بند ہے؟
سرد آنکھیں اور زرد چہرہ!
موت کی بانہوں میں زندگی سے عاری
تم تو نہیں ہو…!
آج مگر یہ سناٹا سا
گھر کے سارے کمروں میں کیوں پھیل گیا!
اور یہ میرے اندر باہر
جانے کیوں کہرام مچا ہے!
لکڑی کے تابوت میں بند‘ تم تو نہیں ہو!
آ جائو نا…
دیکھو تم اسکول سے واپس آ جائو نا

سرخ گلابوں کی خوشبو

khola
  • نام Khola
  • کلاس 1
  • عمر سال 6

مرے لعل کی یاد

آ تجھے دامن بھر لوں
تیرے ماتھے پہ مہکتا ہوا بوسہ دے لوں
تیری تصویر سے اٹھتی ہوئی شہادت کی مہک
وہ ابدتاب مہک جس نے تری دھرتی کو
خرد افروز اجالوں کی سحر بخشی ہے
آنگن آنگن تری یادوں کے علم اٹھتے ہیں
ایک میں کیا،کہ ترے دیس کی ساری مائیں
ایک جاں ہو کے تری یاد کا دم بھرتی ہیں
یاد کا دن ہے، ترے علم شہادت کی قسم
تجھ سے کہنا ہے تو بس یہ کہ بھلائیں گے نہیں
تیری قربانی، تری فکر، ترے عزم کی لو
دل بہ دل نقش ہے
تاحشر رہے گی یونہی
جان جان! ماں تری یادوں کے بھی صدقے جائے

( علی زریون)

سرخ گلابوں کی خوشبو

arham khan 14-8
  • نام Arham Khan
  • کلاس 8
  • عمر سال 14

بھلا خوشبو بھی مرتی ہے

جنہیں اس گلستان میں
پھولوں کی صورت مہکنا تھا
انہیں کچھ ظالموں نے …
پھول بننے سے بہت پہلے مسل ڈالا
بھلا خوشبو بھی مرتی ہے
اسے تو پھیلنا ہے
دور تک سو پھیلتی ہی جائے گی
بھلا کوئی روشنی کو کاٹ پایا ہے
سومیرے پھول سے بچو
تمہاری روشنی ….
تاریک خانوں کو
سدا روشن ہی رکھے گی
اور آنے والے وقتوں میں
یہ خوشبو اور مہکے گی

شاعر: ابو محمد سرمد

سرخ گلابوں کی خوشبو

ammmar iqbal 14-8
  • نام Ammar Iqbal
  • کلاس 8
  • عمر سال 14

چار جانب ہیں بِپھری ھوئی وحشتیں
تا بہ حد ِ نظر یہ زمیں سرخ ہے۔۔۔آسماں سرخ ہے
پھول جیسے بدن
خاک پر اِس طرح سے بکھیرے گئے
روح میں اِک اذیت اتر آئی ہے
شہر پر اِک قیامت اتر آئی ہے
ظالمو ! وحشیو ! بھیڑیو !
کچھ تو خوف ِ خدا۔۔۔۔۔!
تم کو قہر ِ خدا ک ذرا ڈر نہیں ؟
کتنی ماوں کے دِل تم نے چھلنی کئے
تم کو انسان کہنا ھے توہین ِ اِنسانیت
تم تو ظالم ہو ، جابرہو ، فرعونیت کے طرفدار ہو۔۔۔۔!
تم درندوں سے بڑھ کر درندے ہو۔۔۔۔۔۔مَت بھولنا !!
رَب نے لکھ دیں تمہارے مقدر میں ذلت کی گہرائیاں
تم اَبد تک۔۔۔۔!لعینوں کی صَف میں گِنے جاو گے۔۔۔۔۔

شاعرہ: ناز بٹ

سرخ گلابوں کی خوشبو

ali abbas 14-9
  • نام Ali Abbas
  • کلاس 9
  • عمر سال 14

اِن لعینوں کی علی ایسے مذمّت کی جائے

اِن پہ جاری کوئی اِن کی ہی شریعت کی جائے
اِن کے قبضوں سے مساجد کو چھڑا کر لوگو!
عشق والوں کے سپرد ان کی امانت کی جائے
ماوں بہنوں کے کلیجے نہیں پھٹتے دیکھے؟؟؟؟
تم جو کہتے ہو کہ ہاں ان سے رعایت کی جائے؟؟؟؟
ڈر لیا اِن سے جو ڈرنا تھا، بس اب اور نہیں
وقت آیا ھے کہ ختم اِن کی امارت کی جائے .. !!
جو اِنھیں مار کے آئے اسے اپنا سمجھیں
جو اِنھیں ختم کرے اس کی حمایت کی جائے
دین کو ننگ بنا ڈالا ہے بد بختوں نے
ان کے افعال سے جی بھر کے کراہت کی جائے
ہم نے تقدیس اِنھیں دی یہ مقدس ٹھرے
دور اب اِن کی غلط فہمی حرمت کی جائے
جو یہ کہتا ہو کہ بدعَت ہے محبت کرنا
اس عقیدے کے ہر اک شخص پہ شدّت کی جائے
کل بھی کہتا تھا،یہی آج بھِی کہتا ہوں کہ ہاں!
صرف انسان سے،انساں سے محبت کی جائے۔۔!
نام ظالم کا نہ لے اور مذمّت بھی کرے ؟؟
اس منافق کی ہر اک سانس پہ لعنت کی جائے

شاعر: علی زریون

سرخ گلابوں کی خوشبو

ailian fozan 14-9
  • نام Ailian Fozan
  • کلاس 9
  • عمر سال 14

اے ہَواو سنو!ُ

اے ہَواو سنو!ُ
سَر جھکائے ہوئے
سِسکیاں مت بھرو
تار کر دو رِدائیں
لَبادے سبھی نوچ لو
بَین کرتی رہو
آج بیٹے مِرے
عِلم کی کھوج میں
سوئے مقتل چلے
اِن کو رخصت کروّ
آو ماتم کرو۔
اے ہَواو سنو

شاعرہ: نوشی گیلانی

سرخ گلابوں کی خوشبو

adil shahzad 14-9
  • نام Adil Shahzad
  • کلاس 9
  • عمر سال 14

میرے قاتل کا عمامہ مری تصویر پہ رکھ

اب مرے قتل کا الزام نہ تقدیر پہ رکھ
ہاتھ سینے سے اٹھا، قبضہِ شمشیر پہ رکھ
میری تصویر پہ اے پھول چڑھانے والے
میرے قاتل کا عمامہ مری تصویر پہ رکھ
میری تحریر مرے خون سے لِکّھی گئی ہے
اب کسی جنگ کا نقشہ مری تحریر پہ رکھ
تو نے شاعر کو رجَز خوانی پہ مجبور کیا
تجھ میں ہمت ہے تو پہرا مری تقریر پہ رکھ
میری زنجیر کا لوہا ہے چھنک جاتا ہے
اب کوئی طوقِ اٹھا اور مری زنجیر پہ رکھ
ہو چکا حرفِ تسلّی کا تکلّف بے کار
لا کوئی اشکِ ندامت، کفِ دل گیر پہ رکھ

شاعر: عارف امام

سرخ گلابوں کی خوشبو

abdullah zafar 14-9
  • نام Abdullah Zafar
  • کلاس 9
  • عمر سال 14

کربلا تا پشاور یزیدی سپاہ

مرکز علم پر نسلِ بو جہل کا
کیسا سفاک اور خونی حملہ ہوا
آسماں دیکھتا رہ گیا ماجرا
چار جانب تھی بس گولیوں کی صدا
قتل کرتی ہے معصومیت بے گناہ
کربلا تا پشاور یزیدی سپاہ
بو لہو کی فضا میں بسی چار سو
جیت پر اپنی خوش ہو رہا ہے عدو
خوں میں بچوں نے اپنے کیا خود وضو
پیشِ ارضِ وطن مائیں ہیں سرخرو
بربریت ہوئی وہ خدا کی پناہ
کربلا تا پشاور یزیدی سپاہ

شاعر: سید صفدر ہمدانی

سرخ گلابوں کی خوشبو

abdullah ghani khan 14-8
  • نام Abdullah Ghani Khan
  • کلاس 8
  • عمر سال 14

مرے لعل کی یاد

آ تجھے دامن بھر لوں
تیرے ماتھے پہ مہکتا ہوا بوسہ دے لوں
تیری تصویر سے اٹھتی ہوئی شہادت کی مہک
وہ ابدتاب مہک جس نے تری دھرتی کو
خرد افروز اجالوں کی سحر بخشی ہے
آنگن آنگن تری یادوں کے علم اٹھتے ہیں
ایک میں کیا،کہ ترے دیس کی ساری مائیں
ایک جاں ہو کے تری یاد کا دم بھرتی ہیں
یاد کا دن ہے، ترے علم شہادت کی قسم
تجھ سے کہنا ہے تو بس یہ کہ بھلائیں گے نہیں
تیری قربانی، تری فکر، ترے عزم کی لو
دل بہ دل نقش ہے
تاحشر رہے گی یونہی
جان جان! ماں تری یادوں کے بھی صدقے جائے

( علی زریون)

سرخ گلابوں کی خوشبو

muhammad sami peon
  • نام Muhammad Sami
  • کلاس Peon
  • عمر سال 22

مرے لعل کی یاد

آ تجھے دامن بھر لوں
تیرے ماتھے پہ مہکتا ہوا بوسہ دے لوں
تیری تصویر سے اٹھتی ہوئی شہادت کی مہک
وہ ابدتاب مہک جس نے تری دھرتی کو
خرد افروز اجالوں کی سحر بخشی ہے
آنگن آنگن تری یادوں کے علم اٹھتے ہیں
ایک میں کیا،کہ ترے دیس کی ساری مائیں
ایک جاں ہو کے تری یاد کا دم بھرتی ہیں
یاد کا دن ہے، ترے علم شہادت کی قسم
تجھ سے کہنا ہے تو بس یہ کہ بھلائیں گے نہیں
تیری قربانی، تری فکر، ترے عزم کی لو
دل بہ دل نقش ہے
تاحشر رہے گی یونہی
جان جان! ماں تری یادوں کے بھی صدقے جائے

( علی زریون)

سرخ گلابوں کی خوشبو

bilal arshad 8 16
  • نام Bilal Arshad
  • کلاس 8
  • عمر سال 17

مرے لعل کی یاد

آ تجھے دامن بھر لوں
تیرے ماتھے پہ مہکتا ہوا بوسہ دے لوں
تیری تصویر سے اٹھتی ہوئی شہادت کی مہک
وہ ابدتاب مہک جس نے تری دھرتی کو
خرد افروز اجالوں کی سحر بخشی ہے
آنگن آنگن تری یادوں کے علم اٹھتے ہیں
ایک میں کیا،کہ ترے دیس کی ساری مائیں
ایک جاں ہو کے تری یاد کا دم بھرتی ہیں
یاد کا دن ہے، ترے علم شہادت کی قسم
تجھ سے کہنا ہے تو بس یہ کہ بھلائیں گے نہیں
تیری قربانی، تری فکر، ترے عزم کی لو
دل بہ دل نقش ہے
تاحشر رہے گی یونہی
جان جان! ماں تری یادوں کے بھی صدقے جائے

( علی زریون)

سرخ گلابوں کی خوشبو

adnan husain
  • نام Adnan Husian
  • کلاس 9
  • عمر سال 16

مرے لعل کی یاد

آ تجھے دامن بھر لوں
تیرے ماتھے پہ مہکتا ہوا بوسہ دے لوں
تیری تصویر سے اٹھتی ہوئی شہادت کی مہک
وہ ابدتاب مہک جس نے تری دھرتی کو
خرد افروز اجالوں کی سحر بخشی ہے
آنگن آنگن تری یادوں کے علم اٹھتے ہیں
ایک میں کیا،کہ ترے دیس کی ساری مائیں
ایک جاں ہو کے تری یاد کا دم بھرتی ہیں
یاد کا دن ہے، ترے علم شہادت کی قسم
تجھ سے کہنا ہے تو بس یہ کہ بھلائیں گے نہیں
تیری قربانی، تری فکر، ترے عزم کی لو
دل بہ دل نقش ہے
تاحشر رہے گی یونہی
جان جان! ماں تری یادوں کے بھی صدقے جائے

( علی زریون)

سرخ گلابوں کی خوشبو

abrar husain
  • نام Abrar Husain
  • کلاس 9
  • عمر سال 15

مرے لعل کی یاد

آ تجھے دامن بھر لوں
تیرے ماتھے پہ مہکتا ہوا بوسہ دے لوں
تیری تصویر سے اٹھتی ہوئی شہادت کی مہک
وہ ابدتاب مہک جس نے تری دھرتی کو
خرد افروز اجالوں کی سحر بخشی ہے
آنگن آنگن تری یادوں کے علم اٹھتے ہیں
ایک میں کیا،کہ ترے دیس کی ساری مائیں
ایک جاں ہو کے تری یاد کا دم بھرتی ہیں
یاد کا دن ہے، ترے علم شہادت کی قسم
تجھ سے کہنا ہے تو بس یہ کہ بھلائیں گے نہیں
تیری قربانی، تری فکر، ترے عزم کی لو
دل بہ دل نقش ہے
تاحشر رہے گی یونہی
جان جان! ماں تری یادوں کے بھی صدقے جائے

( علی زریون)

سرخ گلابوں کی خوشبو

111
  • نام Abdullah Ghani Awan
  • کلاس 8
  • عمر سال 14

مرے لعل کی یاد

آ تجھے دامن بھر لوں
تیرے ماتھے پہ مہکتا ہوا بوسہ دے لوں
تیری تصویر سے اٹھتی ہوئی شہادت کی مہک
وہ ابدتاب مہک جس نے تری دھرتی کو
خرد افروز اجالوں کی سحر بخشی ہے
آنگن آنگن تری یادوں کے علم اٹھتے ہیں
ایک میں کیا،کہ ترے دیس کی ساری مائیں
ایک جاں ہو کے تری یاد کا دم بھرتی ہیں
یاد کا دن ہے، ترے علم شہادت کی قسم
تجھ سے کہنا ہے تو بس یہ کہ بھلائیں گے نہیں
تیری قربانی، تری فکر، ترے عزم کی لو
دل بہ دل نقش ہے
تاحشر رہے گی یونہی
جان جان! ماں تری یادوں کے بھی صدقے جائے

( علی زریون)

سرخ گلابوں کی خوشبو

img
  • نام احمد علی شاہ
  • کلاس 8
  • عمر سال 12

مرے لعل کی یاد

آ تجھے دامن بھر لوں
تیرے ماتھے پہ مہکتا ہوا بوسہ دے لوں
تیری تصویر سے اٹھتی ہوئی شہادت کی مہک
وہ ابدتاب مہک جس نے تری دھرتی کو
خرد افروز اجالوں کی سحر بخشی ہے
آنگن آنگن تری یادوں کے علم اٹھتے ہیں
ایک میں کیا،کہ ترے دیس کی ساری مائیں
ایک جاں ہو کے تری یاد کا دم بھرتی ہیں
یاد کا دن ہے، ترے علم شہادت کی قسم
تجھ سے کہنا ہے تو بس یہ کہ بھلائیں گے نہیں
تیری قربانی، تری فکر، ترے عزم کی لو
دل بہ دل نقش ہے
تاحشر رہے گی یونہی
جان جان! ماں تری یادوں کے بھی صدقے جائے

( علی زریون)